دبئی پولیس کی کاربن مونو آکسائیڈ کے خطرات سے آگہی کی مہم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

دبئی پولیس نے شہریوں اور مقیموں کو 'خاموش قاتل' کے نام سے پہچانی جانے والی خطرناک گیس کاربن مونو آکسائیڈ کے خطرات سے باخبر اور محفوظ رکھنے کے لئے مہم کا آغاز کیا ہے۔

دبئی پولیس کے مطابق پرانی گاڑیوں کی غیر معیاری دیکھ بھال، ہوا بند جگہ پر دیر تک مشینری سے کام لینا اور پاور وبوسٹرز کے ذریعے سے گاڑی کی پرفارمنس میں تبدیلی کاربن مونو آکسائیڈ گیس سے متاثرہ افراد کے زیادہ تر کیسز کی وجہ بنتے ہیں۔

پولیس کے شعبہ فارنزک سائنس اور کرمنالوجی کے ڈائریکٹر میجر جنرل احمد ثانی بن غالیطہ کے مطابق دبئی پولیس اس خطرناک گیس سے متعلق آگہی پھیلانے کے لئے مہم چلا رہی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ کاربن مونو آکسائیڈ ایک بو، رنگ اور ذائقے سے عاری گیس ہے جس کے سبب اسے جانچنا مشکل ہے۔ اس گیس کے خطرات سے متعلق میجر جنرل احمد ثانی کا کہنا تھا کہ کاربن مونو آکسائیڈ کے سبب سر درد، غنودگی، تھکان اور سستی طاری ہو سکتی ہے جس کے باعث انسان ان جانے میں کومے کی حالت میں جا سکتا ہے۔

دبئی پولیس کےایک اور عہدیدار میجر ڈاکٹر انجینئر محمد علی القاسم کےمطابق پولیس رپورٹس میں کاربن مونوآکسائیڈ سے جڑی اموات اور بے ہوشی کے کیسز میں لوگوں کو اس خطرناک گیس سے متعلق معلومات میں کمی دیکھنے میں آئی ہے جس کے سبب اس آگہی مہم کا سلسلہ شروع کیا گیا ہے۔

امارات کی وزارت صنعت اور ایڈوانس ٹیکنالوجی کے محکمہ کے عبوری ڈائریکٹر یوسف المرزوقی کے مطابق گاڑیوں کے دھویں سے نکلنے والے مضر صحت ذرات کے حوالے سے نئے معیار قائم کرنے کی ضرورت ہے تاکہ کاربن مونو آکسائیڈ جیسی خطرناک گیسز سے ہونے والے نقصانات کو کم کیا جا سکے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں