عرب اسرائیل تنازع

اسرائیل میں عرب مضافاتی علاقے میں فائرنگ سے پانچ افراد ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیل کے شمالی شہر النَّاصِرَة کے مضافاتی علاقے میں جمعرات کو فائرنگ کے ایک واقعے میں پانچ افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

اسرائیل کی میگن ڈیوڈ ادوم ایمرجنسی سروسز کے سینیر ڈاکٹر عاطف سلیم نے بتایا کہ ’’ہم بڑی تعداد میں فورسز کے ساتھ جائے وقوعہ پر پہنچے اور دیکھا کہ یہ ایک اندوہ ناک منظر تھا۔پانچ زخمی بے ہوش پڑے تھے اور ان کے اجسام پر شدید چوٹیں آئی تھیں‘‘۔

طبی عملہ نے بتایا کہ پانچوں افراد کو ابتدائی طبی امداد مہیا کی گئی اور انھیں تشویش ناک حالت میں اسپتال بھیج دیا گیا، جہاں بعد میں ان کی موت واقع ہو گئی ہے۔

اسرائیلی پولیس نے علاقے میں بڑی تعداد میں نفری روانہ کردی ہے اور فائرنگ کے واقعے میں ملوث مشتبہ افراد کی تلاش جاری ہے۔

سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی ویڈیوز میں دیکھا جا سکتا ہے کہ فائرنگ کے بعد ایک کار میں آگ بھڑک اٹھی تھی۔اسرائیلی ایمرجنسی سروسز کے مطابق یہ واقعہ النَّاصِرَة کے ایک اور مضافاتی علاقے میں فائرنگ کے واقعے کے چند گھنٹے کے بعد پیش آیا ہے۔اس میں ایک 3 سالہ بچی اور 30 سالہ شخص شدید زخمی ہوگئے تھے۔

اسرائیل میں عرب برادریوں میں بڑھتے ہوئے تشدد پر نظر رکھنے والی تنظیم ابراہام انیشی ایٹوز(ابراہیم اقدام) کے مطابق 2023 میں مجرمانہ تشدد کےواقعات میں 97 عرب ہلاک ہو چکے ہیں ۔ ان میں سے 86 کو گولی مار کر ہلاک کیا گیا تھا اور 42 کی عمر 30 سال سے کم تھی۔

اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو نے ایک بیان میں کہا ہے کہ’’ میں النَّاصِرَة کے قریب ہونے والے قتل کے ہولناک واقعے پر صدمے میں ہوں۔ ہم قتل کے اس سلسلے کو روکنے کے لیے پرعزم ہیں‘‘۔

اسرائیلی حزب اختلاف کے دو سرکردہ عرب قانون سازوں نے انتہائی دائیں بازو کے قومی سلامتی کے وزیر ایتمار بن غفیر کو تنقید کا نشانہ بنایا، جنھوں نے جرائم کے خلاف کریک ڈاؤن کرنے کا عزم ظاہر کیا ہے۔

ہداش تعال پارٹی کے سربراہ ایمن عودہ نے کہا کہ جو لوگ واقعی جرائم سے لڑنا چاہتے ہیں،انھیں بن غفیر کو فوری طور پر برطرف کر دینا چاہیے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں