امریکا نے ایران کے ساتھ عبوری جوہری معاہدے کی خبر کی تردید کر دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

امریکا نے جمعرات کو اس خبر کی تردید کی ہے کہ امریکا اور ایران ایک عبوری معاہدے کے قریب ہیں جس کے تحت ایران پابندیوں میں نرمی کے بدلے اپنے جوہری پروگرام کو روک دے گا۔

وائٹ ہاؤس کی قومی سلامتی کونسل کے ترجمان نے مڈل ایسٹ آئی کی ویب سائٹ پر شائع ہونے والے ایک مضمون کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ یہ رپورٹ غلط اور گمراہ کن ہے۔

اس رپورٹ میں دو نامعلوم ذرائع کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا تھا کہ ایران اور امریکہ "ایک عارضی معاہدے کے قریب ہیں جو ایران میں یورینیم کی افزودگی سے متعلق سرگرمیوں کو کم کرنے کے بدلے پابندیوں میں کچھ ریلیف دے گا۔"

رپورٹ میں یہ بھی دعوی کیا گیا تھا کہ "دونوں فریقوں نے اپنے اپنے متعلقہ اعلیٰ حکام سے پہلے ایک عارضی معاہدے پر اتفاق کر لیا ہے۔"

اس رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا تھا کہ معاہدے کے تحت ایران 60 فیصد یا اس سے زیادہ خالص یورینیم کی افزودگی بند کرنے کا عہد کرے گا، اور اقوام متحدہ کے جوہری نگران ادارے کے ساتھ تعاون جاری رکھے گا، اس کے بدلے میں اسے یومیہ 10 لاکھ بیرل تیل برآمد کرنے کی اجازت دی جائے گی اور اسے اس کی بیرون ملک آمدنی اور دیگر منجمد فنڈز تک رسائی دی جائے گی۔''

مقبول خبریں اہم خبریں