ایران: ممتاز عالم دین کو قتل کرنے والے کو پھانسی کی سزا

مقتول کا خاندان اسے معاف کر دے تو مجرم فیصلے سے بچ سکتا ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

ایران میں ممتازعالم دین آية الله عباس علي سليماني کو قتل کرنے پر ایرانی شہری کو پھانسی کی سزا سنا دی گئی۔ عدلیہ سے وابستہ ایجنسی نے بدھ کو بتایا کہ گزشتہ اپریل میں ملک کے شمال میں ایک ممتاز عالم دین کو قتل کرنے کے الزام میں ایک ایرانی شہری کو موت کی سزا سنائی گئی ہے۔ 26 اپریل کو 75 سالہ کے عباس علی سلیمانی کو اس وقت گولی مار کر قتل کردیا گیا تھا جب وہ مازندان گورنری کے شہر بابلسر میں ایک بینک کے اندر موجود تھے۔

جوڈیشری اتھارٹی سے وابستہ "میزان آن لائن" ایجنسی نے بتایا کہ قاتل ایرانی کی شناخت ظاہر نہیں کی گئی۔ اس کو قصاص کے حکم کے مطابق سزائے موت سنائی گئی ہے۔ مجرم اس صورت میں پھانسی سے بچ سکتا ہے اگر مقتول کا خاندان اسے معاف کر دے۔

واقعہ پر مقامی گورنر حسین پور نے اعلان کیا تھا کہ یہ حملہ "دہشت گرد" نہیں تھا کیونکہ علما پر جان لیوا حملے شاذ و نادر ہی ہوتے ہیں۔

اسی طرح کا ایک واقعہ اپریل 2022 میں ہوا تھا جب ایک مبینہ عسکریت پسند نے شمال مشرقی شہر مشہد میں دو شیعہ علما کو چاقو مار کر ہلاک کر دیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں