حزب اللہ کا لبنان کی فضائی حدود میں درانداز اسرائیلی ڈرون کو مار گرانے کا دعویٰ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

لبنان کی مسلح ملیشیا حزب اللہ نے کہا ہے کہ اس کے جنگجوؤں نے پیر کے روز ایک اسرائیلی ڈرون کو مار گرایا ہے۔اس نے دعویٰ کیا ہے کہ یہ ڈرون سرحد کے قریب جنوبی لبنان کی فضا میں پرواز کر رہا تھا۔

حزب اللہ نے اس ڈرون کی قسم کے بارے میں مزید تفصیل فراہم نہیں کی۔ اس کے بارے میں اس کا دعویٰ ہے کہ اسے اسرائیل کی سرحد سے شمال میں واقع گاؤں زبکین کے قریب مار گرایا گیا ہے۔اسرائیل کی جانب سے فوری طور پر اس پرکوئی تبصرہ نہیں کیا گیا۔

یہ واقعہ لبنان اور اسرائیل کی سرحد پر کئی ہفتوں سے جاری کشیدگی کے بعد پیش آیا ہے، خاص طور پر ایک متنازع علاقے میں کشیدگی پائی جارہی ہے جسے شبعا فارمز کے نام سے جانا جاتا ہے۔

اس ماہ کے اوائل میں اسرائیلی فوجیوں نے متعدد لبنانی مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے آنسو گیس کا استعمال کیا تھا۔ان لبنانیوں نے سرحد پر صہیونی فوجیوں کی جانب پتھراؤ کیا تھا۔ کچھ مظاہرین اور لبنانی فوجیوں کو سانس لینے میں دشواری کا سامنا کرنا پڑا۔

یہ مظاہرہ کفرشوبا کی پہاڑیوں کے کنارے کیا گیا تھاجس کے بارے میں لبنان کا کہنا ہے کہ یہ اس کی سرزمین ہے اور اس پر اسرائیل نے قبضہ کر رکھا ہے۔ان پہاڑیوں اور نزدیک واقع شبعا فارم پر اسرائیل نے 1967 کی مشرق اوسط جنگ میں قبضہ کر لیا تھا جبکہ لبنان ان پر اپنے دعوے سے دستبردار نہیں ہوا ہے۔

اس ماہ کے اوائل میں اسرائیلی میڈیا نے خبر دی تھی کہ حزب اللہ نے وہاں "اسرائیلی علاقے میں" دو خیمے لگائے ہیں مگر حزب اللہ کی جانب سے کوئی تبصرہ نہیں کیا گیا۔

حزب اللہ نے ماضی میں بھی اسرائیلی ڈرون مار گرانے کا دعویٰ کیے ہیں اور اسرائیلی فوج بھی ماضی میں اس علاقے میں لبنانی ملیشیا کے ڈرونز کو مار گرانے کے دعوے کرتی رہی ہے۔اسرائیل حزب اللہ کو اپنے لیے سب سے سنگین فوری خطرہ سمجھتا ہے اور اندازہ لگایا گیا ہے کہ اس کے پاس اسرائیل کو نشانہ بنانے کے لیے قریباً ڈیڑھ لاکھ راکٹ اور میزائل ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں