سعودی عرب میں انسداد بدعنوانی کے 19 فوجداری مقدمات میں ملزموں کو سزائیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
6 منٹس read

سعودی عرب میں کنٹرول اور انسداد بدعنوانی اتھارٹی کے سرکاری ترجمان نے بتایا ہے کہ اتھارٹی نے گزشتہ عرصہ کے دوران متعدد فوجداری مقدمات کا آغاز کیا اور مجرموں کے خلاف باقاعدہ کارروائی مکمل کی جا رہی ہے۔ ان میں 19 مقدمات نمایاں ہیں۔

پہلا مسئلہ

وزارت دفاع کے تعاون سے دو نان کمیشنڈ افسران کو معطل کر دیا گیا۔ دو رہائشیوں کے ساتھ ملکر کا انہوں نے غلط دستاویزات جمع کرائی تھیں۔ اس معاملہ میں 13 لاکھ ریال کی رقم بے قاعدہ طریقے سے خرچ کی گئی تھی۔

دوسرا مسئلہ

سعودی عرب کے مرکزی بینک کے تعاون سے تین باشندے اس وقت پکڑے گئے جب انہوں نے چار ہزار ریال کی رقم ایک مقامی بینک کے ملازم کو دی تھی اور اس کے بدلے میں 3 لاکھ 16 ہزار ریال کی رقم جمع کرائی گئی۔ کمرشل اداوں کے ان بینک اکاؤنٹس سے 29 لاکھ 81 ہزار ریال کی رقم بیرون ملک منتقل کی گئی۔

تیسرا مسئلہ

مختلف علاقوں میں سرکاری ہسپتالوں کے ساتھ معاہدہ کرنے والی کمپنیوں کے لیے کام کرنے والے چھ رہائشیوں کو اس بنا پر گرفتار کرلیا گیا جنہوں نے ناٹ فار سیل ادویات کو غیر قانونی طریقے سے فروخت کیا تھا۔ انہوں نے 10 لاکھ 31 ہزار ریال کی ادویات فروخت کی تھیں۔ ملزموں سے ایک لاکھ 65 ہزار ریال کی رقم برآمد بھی کرلی گئی۔

چوتھا مسئلہ

وزارت داخلہ کے تعاون سے ایک شہری کو اس وقت گرفتار کر لیا یا جب اس نے نسب کو ثابت کرنے کے لیے ڈی این اے کے نمونوں کے تبادلے کے بدلے فرانزک ملازم کو 30 ہزار ریال کی رشوت دی تھی۔

پانچواں مسئلہ

سعودی عرب کی ایک گورنری کے سیکرٹریٹ ملازم کو معطل کردیا گیا۔ اس نے کسی شہری کے لیے زمین کی گرانٹ جاری کرانے کے لیے ایک لاکھ 88 ہزار ریال کی رقم رشوت لی تھی۔

چھٹا مسئلہ

سعودی عرب کے مرکزی بینک کے تعاون سے ایک مقامی بینک کے تین سابق ملازمین کو معطل کر دیا گیا۔ انہوں نے غیر قانونی طریقے سے رئیل اسٹیٹ فنانسنگ کی درخواست مکمل کی تھی اور اس کے بدلے میں دو لاکھ دس ہزار ریال بطور رشوت وصول کئے تھے۔

ساتواں مسئلہ

فلیگرینٹ ڈیلیکٹو میں ایک نجی کمپنی کے سکیورٹی اینڈ سیفٹی ڈائریکٹر کو اس وقت گرفتار کیا گیا جب اپنی کمپنی کے ذیلی معاہدے میں ہونے والی خلاف ورزیوں کو ریکارڈ نہ کرنے کے بدلے میں 30 ہزار ریال کی رقم وصول کی تھی۔

آٹھواں مسئلہ

ایک گورنری کے سیکرٹریٹ میں سابق ملازم کو اس بنا پر معطل کردیا گیا کہ اس نےاپنی ملازمت کے دوران ایک تاجر کی ملکیت والی عمارت میں تعمیراتی خلاف ورزی کو معاف کرنے کے بدلے میں 80 ہزار ریال وصول کیے تھے۔

نواں مسئلہ

ایک گورنریٹ میں انجینئرنگ کے دفتر میں کام کرنے والے ایک شہری کو گرفتار کرلیا گیا جس نے ایک سروے رپورٹ تیار کرنے کے بدلے میں 20 ہزار ریال کی رقم حاصل کی تھی۔

دسواں مسئلہ

سعودی عرب کے سنٹرل بینک کے تعاون سے ایک مقامی بینک سے وابستہ تجارتی ادارے کے ایک ملازم کو اس وقت گرفتار کر لیا گیا جب اس نے خصوصی ادائیگیوں کی فراہمی میں سہولت فراہم کرنے کے عوض آٹھ ہزار ریال کی رقم وصول کی تھی۔ اس نے رئیل اسٹیٹٹ کا قرض غیر قانونی طریقے سے جاری کرانے میں مدد کی تھی۔

گیارہواں مسئلہ

نیشنل گارڈ کی وزارت میں ایک ملازم اور سابق نان کمیشنڈ افسر کو گرفتار کرلیا گیا۔ اس نے فرضی افراد کے ناموں پر سرکاری سبسڈی حاصل کرنے کی کوشش کی تھی۔

بارہواں مسئلہ

سعودی بجلی کی کمپنی کے نظام میں ڈیٹا رجسٹر کیے بغیر بجلی کے دو میٹر لگوانے والے شہری کو گرفتار کرلیا گیا۔

تیرہواں مسئلہ

سعودی عرب کی ایک گورنری میں وزارت صحت میں کام کرنے والے ملازم کو معطل کردیا گیا۔ اس نے ہسپتال سے میڈیکل رپورٹس جاری کرنے کے لیے ایک شہری سے رشوت وصول کی تھی۔

چودہواں مسئلہ

سعودی عرب کے مرکزی بینک کے تعاون سے ایک رہائشی کو اس وقت رنگے ہاتھوں گرفتار کیا گیا جب اس نے ایک مقامی بینک کے ملازم کو کمرشل کے نام پر بینک اکاؤنٹ کھولنے کے بدلے تین ہزار ریال کی رقم ادا کی تھی۔

پندرہواں مسئلہ

انجینئرنگ کنسلٹنسی کے دفتر میں انجینئر کے طور پر کام کرنے والے ایک رہائشی کو گرفتار کرلیا گیا۔ اس نے غلط معلومات پر زمین کے معاہدے کو اپ ڈیٹ کیا تھا۔ اس کے بدلے میں 10 ہزار ریال رشوت لی تھی۔

سولھواں مسئلہ

سعودی آرامکو کے تعاون سے ایک رہائشی کو اس وقت رنگے ہاتھوں گرفتار کیا گیا جب اس نے پچیس ہزار ریال کی رقم کمپنی کے سیکیورٹی ملازمین میں سے ایک کے حوالے کی تھی۔ اس کے بدلے میں اسے کمپنی کا سامان ضبط کرنے کے قابل بنایا گیا تھا۔

سترہواں مسئلہ

سعودی بجلی کمپنی کے ساتھ معاہدہ کرنے والی کمپنی میں انجینئر کے طور پر کام کرنے والے رہائشی کی معطلی؛ غیر قانونی طریقے سے تجارتی ادارے کے لیے پیشہ ورانہ لائسنس کے اجراء میں سہولت فراہم کرنے کے عوض (47,658) سینتالیس ہزار چھ سو اٹھاون ریال کی رقم حاصل کرنے کے لیے۔

اٹھارہوں مسئلہ

ایک گورنری میں انجینئرنگ کنسلٹنگ کمپنی میں بطور انجینئر کام کرنے والے رہائشی کو حراست میں لے لیا گیا۔ اس نے ایک پروجیکٹ کے لیے معاہدے کی کچھ غلطیاں معاف کرنے کے عوض 55 ہزار ریال وصول کی تھی۔

انیسواں مسئلہ

فلیگرینٹ ڈیلک کے رہائشی کو اس وقت گرفتار کرنا جب اس نے معاہدہ کرنے والے تجارتی اداروں میں سے ایک کے نمائندے سے 4 ہزار 5 سو ریال کی رقم وصول کی۔ وزارت تعلیم کے ساتھ ایک گورنریٹس کے محکمہ تعلیم میں کام کرنے والے ملازم کی درخواست پر رشوت لے کر بدلے میں اس نے منصوبوں کے لیے مالیات کی تقسیم کے طریقہ کار کو آسان بنایا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں