نیتن یاہو حکومت نے جنین میں آپریشن کا دائرہ وسیع کردیا، عرب لیگ کی وارننگ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو کی سربراہی میں اسرائیلی حکومت نےغرب اردن کے جنین میں فوجی آپریشن کو ایک ایسے وقت میں توسیع دینے پر اتفاق کیا جب عرب لیگ نے اس حملے کے نتائج سے خبردار کرتے ہوئے کہا ہےکہ اس سے خطے میں سلامتی اور استحکام کو خطرہ لاحق ہو سکتا ہے۔عرب لیگ نے خبردار کیا ہے کہ اس کے مشرق وسطیٰ کی سلامتی پر سنگین نتائج برآمد ہوں گے۔

جنین کیمپ میں اسرائیلی فوجی کارروائی کےجلو میں ’العربیہ‘ کے نامہ نگار نے آج منگل کو اطلاع دی کہ اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے جنین اور غزہ کے اطراف میں سلامتی کی صورتحال کا جائزہ لینے کے لیے ایک اجلاس منعقد کیا ہے۔

دریں اثنا اسرائیلی وزیر دفاع یوآو گیلنٹ نے سکیورٹی سروسز شن بیٹ اور انٹیلی جنس سروسز کے سربراہوں کے ساتھ جنین کی صورتحال کا جائزہ لیا۔

گیلینٹ نے زور دیا کہ جنین آپریشن دہشت گردوں کے بنیادی ڈھانچے کو تباہ کرنے تک جاری رہے گا۔ جنین میں فورسز کو کارروائی کی مکمل آزادی دی گئی ہے۔

ادھر اقوام متحدہ کے دفتر برائے انسانی امور نے مغربی کنارے کے جنین میں فضائی اور زمینی کارروائیوں کے حجم پر اپنی تشویش کا اظہار کیا۔ انہوں نے اسرائیلی آپریشن کے دوران جنین میں 3 فلسطینی بچوں کی ہلاکت کے بعد اپنی گہری تشویش کا اظہار کیا۔

درایں اثناءعالمی ادارہ صحت کے ترجمان نے کہا ہے کہ اسرائیلی فوج نے طبی ٹیموں کو جنین پر ہونے والے حملوں میں زخمی ہونے والوں کے علاج کے لیے شہر میں داخل ہونے سے روک دیا گیا۔ ان میں کئی افراد شدید زخمی ہوئے ہیں جنہیں فوری طبی امداد کی ضرورت ہے۔

جنین کے سرکاری ہسپتال کے ڈائریکٹر وسام بکر نے انکشاف کیا ہے کہ اسرائیلی فورسز جنین پر اپنی مہم میں فلسطینیوں کو نشانہ بناتے وقت سر اورجسم کے نازک حصوں پر گولیاں بر سا رہی ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ بیشتر زخمیوں کو ان کے نازک حصوں پر گہرے زخم آئے ہیں۔

قبل ازیں منگل کو "العربیہ" اور "الحدث" کے نامہ نگاروں نے اطلاع دی تھی کہ رات کے اوقات میں زور دار دھماکوں کی آوازیں پورے جنین میں گونج رہی تھیں۔ جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ اسرائیلی فوجیں جنین کیمپ کے اندر آہستہ آہستہ پیش قدمی کر رہی ہیں جب کہ فلسطینی وزارت صحت نے اعلان کیا کہ جنین میں اسرائیلی آپریشن سے مرنے والوں کی تعداد بڑھ کر 10 ہو گئی ہے اور 100 کے قریب زخمی ہیں جن میں 20 کی حالت تشویشناک ہے۔

یروشلم "یروشلم پوسٹ" اخبار نے اسرائیلی فوج کے ترجمان ڈینیئل ہاگری کے حوالے سے کہا ہے کہ جنین میں فوجی آپریشن ابتدائی طور پر توقع سے زیادہ تیز رفتاری سے ختم ہو سکتا ہے۔

اس سے پہلے العربیہ کے نامہ نگار نے جنین کیمپ کے آس پاس ایلیٹ کور سے تقریباً 1000 اسرائیلی فوجیوں کی تعیناتی کا اعلان کیا تھا۔ نامہ نگار نے مزید کہا کہ اسرائیلی افواج ایک نئے حملے کی تیاری کے لیے اپنی تعیناتی اور نقل و حرکت جاری رکھے ہوئے ہیں۔

’العربیہ‘ اور ’الحدث‘ کے نامہ نگار نے بتایا کہ کیمپ پر حملے کے دوسرے مرحلے کے آغاز سے قبل اسرائیلی جاسوس طیاروں نے جنین پر پروازیں کی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں