اردن: جون میں ہزار سے زیادہ منشیات فروش اور پروموٹرز گرفتار

اردنی فوج گاہے بگاہے ی سرزمین سے منشیات کی سمگلنگ ناکام بنانے کا اعلان کرتی رہتی ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اردن میں حکام نے بتایا ہے کہ ماہ جون میں ہونے والے کریک ڈاؤن کے دوران ہزار سے زیادہ منشیات فروشوں اور پروموٹرز کو گرفتار کرلیا گیا اور منشیات کی بڑی مقدار قبضہ میں لے لی۔

اردن میں عوامی سلامتی کے ڈائریکٹوریٹ کے میڈیا ترجمان عامر السرطاوی نے کہا کہ جون کے دوران نشہ آور اشیا کی سمگلنگ اور فروغ کے 593 مقدمات نمٹائے گئے۔ اس دوران ایک ہزار 98 افراد کو منشیات فروشی یا اس کام کو فروغ دینے کے الزام میں گرفتار کیا گیا۔ تمام گرفتار افراد کو عدالتوں میں پیش کردیا گیا۔

عامر السرطانوی نے مزید کہا کہ ان کیسز کے دوران 124 کلو گرام چرس، 9 لاکھ کیپٹاگون گولیاں، 8 ہزار نشہ آور گولیاں، 4 کلو گرام نارکوٹک کرسٹل، 37 کلو گرام چرس، 24 گرام کوکین، 2 کلو گرام صنعتی پاؤڈر اور 4 کلو گرام صنعتی پاؤڈر برآمد ہوا ہے۔ اسلحہ کی بڑی مقدار بھی پکڑی گئی ہے۔

انہوں نے کہا اردن کے تمام خطوں میں انسداد منشیات کی کارروائیاں جاری ہیں۔ منشیات سمگلنگ کرنے والے کسی بھی شخص کو حراست میں لے لیا جائے گا۔ واضح رہے اردن کی فوج گاہے بگاہے اعلان کرتی ہے کہ اس نے شامی سرزمین سے آنے والی منشیات اور ہتھیاروں کی سمگلنگ کی کارروائیوں کو ناکام بنا دیا ہے۔ حکام نے بتایا کہ پکڑی گئی 85 فیصد منشیات کو اردن سے باہر سمگل کیا جانا تھا۔

اردن کے شاہ عبداللہ دوم نے 22 مئی کو اس عزم کا اظہار کیا تھا کہ وہ مقامی اور علاقائی منشیات کے گروہوں کے گرد گھیرا تنگ کریں گے۔ مملکت کی قومی اور علاقائی سلامتی کے لیے خطرہ بننے والے ان گروہوں سے آہنی ہاتھوں سے نمٹا جائے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں