پاسداران انقلاب نے خلیج عمان میں ایک جہاز پکڑ لیا: امریکی بحریہ کا دعویٰ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی بحریہ کے ایک ترجمان نے اعلان کیا ہے کہ ایرانی پاسداران انقلاب نے جمعرات کو خلیج عمان میں بین الاقوامی پانیوں میں ایک تجارتی جہاز کو پکڑا اور یہ جہاز اسمگلنگ کی سرگرمیوں میں ملوث ہو سکتا ہے۔

امریکی پانچویں بحری بیڑے کے ترجمان ٹم ہاکنز نے کہا کہ امریکی بحریہ نے صورتحال پر گہری نظر رکھنے کے لیے بحری جہاز تعینات کیے ہیں۔

"مزید مداخلت کی ضرورت نہیں ہے۔"

انہوں نے مزید کہا کہ "آخر میں امریکی بحریہ کی مرکزی کمان نے اندازہ لگایا کہ اس واقعہ کے حالات میں مزید مداخلت کی ضرورت نہیں ہے۔"

سرکاری ایرانی ایجنسی "ارنا" نے بتایا کہ ٹینکر رچمنڈ وائجر کو کنٹرول کرنے کی کوشش عدالتی حکم کے مطابق خلیج عمان میں ایک ایرانی بحری جہاز سے ٹکرانے کے بعد کی گئی اور اسے نقصان پہنچا۔

"امریکی مداخلت"

یہ بات امریکی بحریہ کی جانب سے بدھ کے روز سامنے آئی کہ اس نے خلیج عمان میں ایران کو دو تجارتی ٹینکروں کو قبضے میں لینے سے روکنے کے لیے مداخلت کی تھی۔

ایجنسی نے ایران کے صوبہ ہرمزگان میں میری ٹائم سرچ اینڈ ریسکیو سینٹر کی رپورٹ کے حوالے سے بتایا ہے کہ بہاماس کے جھنڈے والے آئل ٹینکر کا نام رچمنڈ وائجر ایرانی جہاز سے ٹکرا گیا جس میں عملے کے سات افراد سوار تھے، جس میں پانچ شدید زخمی ہو گئے۔

امریکی بحریہ اس سے قبل اسی علاقے میں جزائر مارشل کے پرچم بردار آئل ٹینکر "ٹی آر ایف موس" کے واقعے سے نمٹ چکی ہے۔

امریکی بحریہ نے کہا کہ ایران نے ایک ہفتے میں دو آئل ٹینکرز کو قبضے میں لیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں