سعودی عرب، فرانس اور امریکا کا لبنانی پارلیمنٹ سے صدر کے انتخاب پر زور

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب ، فرانس اورامریکا نے مشترکہ طور پر لبنانی پارلیمنٹ پرملک کے صدر کے انتخاب پر زور دیا ہے۔ وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان نے منگل کے روز لبنان کے لیے فرانسیسی صدر کے خصوصی ایلچی جین یوس لی ڈریان سے ملاقات میں بھی لبنان میں صدر کے انتخاب کے حوالے سے اپنے اصولی موقف کو دہرایا۔

ملاقات کے دوران انہوں نے مملکت اور فرانس کے درمیان دوطرفہ تعلقات اور کئی شعبوں میں مشترکہ تعاون کو تیز کرنے کے طریقوں کا جائزہ لیا۔ اس کے علاوہ لبنانی معاملے میں ہونے والی تازہ ترین پیشرفت، علاقائی اور بین الاقوامی میدانوں میں ہونے والی پیشرفت اور اس سلسلے میں کی جانے والی کوششوں پر تبادلہ خیال کیا۔

فرانس کی وزارت خارجہ نے منگل کو کہا تھا کہ سعودی عرب، مصر، قطر، فرانس اور امریکا نے لبنانی پارلیمنٹ سے صدر کے انتخاب پر زور دیا۔ اس کے علاوہ ان ممالک نے لبنان کی سیاسی جماعتوں پر زور دیا کہ وہ ملک میں سیاسی جمود کو توڑنے کےلیے اقدامات کریں۔

فرانس کی وزارت خارجہ کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان کے مطابق لبنان کے بحران پر بات چیت کے لیے پانچ ممالک کے نمائندوں نے پیر کو دوحہ میں ملاقات کی۔

بیان میں اس بات پر زور دیا گیا ہے کہ "لبنانی ارکان پارلیمنٹ کو آئین کے تحت ان پر عائد ذمہ داری کو سنبھالنے اور ملک کے لیے صدر کے انتخاب کے لیے آگے بڑھنے کی ضرورت ہے۔ جب کہ ایک ایسے ملک میں صدرکا منصب آٹھ ماہ سے زائد عرصے سے خالی ہے جو مکمل اقتصادی تباہی کے دھانے پر کھڑا ہے۔

حزب اللہ اور اس کے مخالفین کے درمیان جاری کشیدگی کی روشنی میں جون کے وسط میں صدر کے انتخاب کے لیے پارلیمنٹ میں ایک نئی کوشش ناکام ہو گئی تھ۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ پانچوں ممالک لبنانی رہ نماؤں اور جماعتوں پر زور دیتے ہیں کہ وہ موجودہ سیاسی تعطل سے نکلنے کے لیے فوری اقدامات کریں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں