اسرائیلی فوجی 'گاڑی کو ٹکر مارنے کا انجام، فلسطینی موت کی نیند سلا دیا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

فلسطینی حکام نے ہفتے کے روز بتایا کہ اسرائیلی فورسز نے مقبوضہ مغربی کنارے میں ایک فلسطینی کو گولی مار کر موت کی نیند سلا دیا گیا۔ فلسطینی پر الزام تھا کہ اس نے نابلس کے قریب اسرائیل فوج کی "گاڑیوں کو ٹکر مارنے کی کوشش" کی تھی۔

فلسطینی وزارت صحت نے بتایا کہ 18 سالہ فوزی مخالفہ جمعہ کو رات گئے سبسطية قصبے میں قابض (اسرائیلی افواج) کی گولیوں سے مارا گیا۔ فوزی دوسرا فلسطینی تھا جسے اسرائیلی فوج نے مغربی کنارے میں چند گھنٹوں میں مار ڈالا۔

فوج نے کہا کہ فوجیوں نے "گاڑی میں سوار مشتبہ افراد پر گولیاں چلا کر" شمالی مغربی کنارے کے قصبے میں "گاڑی کو ٹکر مارنے کی کوشش" کا جواب دیا۔ ڈرائیور کو بے اثر کر دیا گیا تھا۔ مخالفہ کی گاڑی میں سوار ایک اور "مشتبہ" شخص زخمی ہوا جسے گرفتار کر لیا گیا۔"

یہ ہلاکت خیز حملہ مغربی کنارے میں بڑھتی ہوئی کشیدگی کے دوران ہوا جہاں اسرائیل نے 1967ء میں ہونے والی چھے روزہ جنگ کے بعد سے قبضہ کر رکھا ہے۔

اس علاقے میں اسرائیلی اہداف پر فلسطینیوں کے مسلسل حملوں کے ساتھ ساتھ فلسطینی برادریوں کے خلاف اسرائیلی آباد کاروں کے تشدد میں اضافہ دیکھا گیا ہے۔

قبل ازیں جمعہ کے روز فلسطینی وزارتِ صحت نے 17 سالہ محمد البايض کی رام اللہ شہر میں ہلاکت کی رپورٹ دی تھی۔
رپورٹ میں کہا گیا کہ البايض کی موت اسرائیلی افواج کی گولیوں سے لگنے والے زخموں سے ہوئی، جبکہ اسرائیلی بارڈر پولیس نے الزام عائد کیا کہ البايض نے اہلکاروں پر حملہ کیا تھا۔

فوج نے ایک بیان میں کہا کہ "پرتشدد کارروائیوں کے دوران مشتبہ افراد نے پتھر اور دھماکہ خیز مواد" اسرائیلی فوج پر پھینکا۔ ایک مشتبہ شخص نے بم پھینکا جس کے جواب میں سیکورٹی گارڈ نے گولی چلا دی۔" رپورٹ میں مزید کہا گیا کہ "ایک ہٹ کا پتا لگا لیا گیا۔"

اے ایف پی کی دونوں جانب کے سرکاری ذرائع سے جمع شدہ تعداد کے مطابق، اسرائیلی-فلسطینی تنازع سے منسلک تشدد سے اس سال کم از کم 198 فلسطینی، 27 اسرائیلی، ایک یوکرینی اور ایک اطالوی ہلاک ہو گئے۔

ان میں فلسطین کی جانب سے جنگجو اور سویلین افراد، اور اسرائیل کی جانب سے زیادہ تر سویلین اور عرب اقلیت کے تین افراد شامل ہیں۔

مغربی کنارا تین ملین فلسطینیوں اور چار لاکھ نوے ہزار اسرائیلیوں کا بھی مسکن ہے۔ اسرائیلی، آباد کار علاقوں میں رہتے ہیں جو بین الاقوامی قانون کے تحت غیر قانونی سمجھی جاتی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں