یو اے ای نے پناہ گزین کیمپ میں جھڑپوں کے بعد شہریوں کے لبنان جانے پرپابندی عائد کر دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

متحدہ عرب امارات نے اپنے شہریوں پر زور دیا ہے کہ وہ لبنان کا سفر نہ کریں۔ یہ فیصلہ فلسطینی پناہ گزین کیمپ میں مسلح دھڑوں کے درمیان ایک ہفتے کی شدید لڑائی کے بعد کیا گیا، جس کے نتیجے میں دیگر خلیجی ممالک نے بھی اپنے شہریوں پر اسی طرح کی پابندی عائد کی ہے۔

"ملک کے شہریوں کی حفاظت کے لیے، وزارت خارجہ نے متحدہ عرب امارات کے شہریوں کے لبنان کے سفر پر پابندی کے پہلے جاری کردہ فیصلے پر عمل کرنے کی اہمیت پر زور دیا ہے"۔متحدہ عرب امارات کی وزارت خارجہ نے اتوار کو ایک ٹویٹ کے ذریعے بھی شہریوں کو تاکید کی۔

وزارت نے متحدہ عرب امارات کے شہریوں کے لیے ہنگامی نمبر0097180024 کا اعلان بھی کیا ہے جہاں کوئی بھی شہری جسے مدد کی ضرورت ہو رابطہ کر سکتا ہے۔

خیال رہے کہ 29 جولائی کو لبنان کے عین الحلو پناہ گزین کیمپ میں مرکزی دھارے کے گروپ الفتح اور ایک مخالف انتہا پسند گروپ کے درمیان مسلح جھڑپیں ہوئیں، جس میں کم از کم 13 افراد ہلاک ہوئے، جن میں زیادہ تر عسکریت پسند تھے۔

اقوام متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین برائے فلسطین کے مطابق یہ پناہ گزین کیمپ ملک کے 12 فلسطینی کیمپوں میں سب سے بڑا ہے، جس میں تقریباً 80,000 سے 250,000 فلسطینی پناہ گزین رہائش پذیر ہیں۔

لڑائی شروع ہونے کے بعد سے کیمپ کے 80,000 رہائشیوں میں سے ایک چوتھائی بے گھر ہو چکے ہیں۔

خلیجی ممالک کے علاوہ جرمنی اور برطانیہ جیسے ممالک نے بھی اپنے شہریوں کو لبنان کا سفر کرنے سے روکتے ہوئے ایسی ہی وارننگ جاری کی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں