طویل مدتی مشن پر پہلے عرب خلاباز امارات کے سلطان النیادی یکم ستمبر کو واپس آئیں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

متحدہ عرب امارات کے خلاباز سلطان النیادی جو طویل مدتی خلائی مشن پر تعینات پہلے عرب خلاباز ہیں، بین الاقوامی خلائی اسٹیشن پر چھ ماہ گذارنے کے بعد یکم ستمبر کو زمین پر واپس آ رہے ہیں۔

النیادی، ناسا کے خلاباز اسٹیفن بوون اور ووڈی ہوبرگ اور روزکوزموز کے آندرے فیدیو ناسا کے سپیس ایکس کریو-6 کا حصہ تھے جو 2 مارچ 2023 کو فلوریڈا کے کینیڈی خلائی مرکز سے روانہ ہوا۔

خلائی سٹیشن پر قیام کے دوران عملے نے 200 سے زیادہ سائنسی تجربات اور ٹیکنالوجی کے مظاہرے کئے۔

اسپیس ایکس ڈریگن کا ایک خلائی جہاز، جس کا نام اینڈیوور ہے؛ جو مدار میں چکر لگانے والی آؤٹ پوسٹ پر کھڑا ہے، فلوریڈا کے ساحل پر اترتے ہوئے 1 ستمبر تک چاروں کو زمین پر واپس لے آئے گا۔

ناسا نے ایک بیان میں کہا۔ "مشن کے دوران عملے نے سینکڑوں تجربات اور ٹیکنالوجی کے مظاہروں میں حصہ لیا جن میں طلباء کے روبوٹک چیلنجز، پودوں کی جینیات اور تقریباً بے وزنی کی حالت میں انسانی صحت شامل تھے تاکہ زمین کے نچلے مدار سے باہر کی چھان بین کے لیے تیاری اور زمین پر زندگی کو فائدہ پہنچایا جا سکے۔"

کریو-6 ایجنسی کے کمرشل کریو پروگرام کے لیے سپیس ایکس کے ساتھ عملے کا چھٹا گردشی مشن ہے۔ باقاعدہ تجارتی عملے کے گردشی مشن ناسا کو اسٹیشن پر ہونے والی اہم تحقیق اور ٹیکنالوجی کی تحقیقات کو جاری رکھنے کے قابل بناتے ہیں۔

بیان میں مزید کہا گیا۔ "اس طرح کی تحقیق زمین پر لوگوں کو فائدہ پہنچاتی ہے اور ایجنسی کے آرٹیمس مشن کے ذریعے مستقبل کی انسانی تلاش کے لیے بنیاد فراہم کرتی ہے جو مریخ پر مستقبل کی مہمات کی تیاری کے لیے خلانوردوں کو چاند پر بھیجے گا۔"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں