غزہ میں کوڑے دان میں کئی دن سے آتش زدگی جاری، حکام کی مدد کی اپیل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

غزہ میں حکام نے کچرے کو ٹھکانے لگانے کی جگہ پر گذشتہ کئی دن سے لگی ہوئی آگ پر قابو پانے کے لیے مدد کی اپیل کی ہے، جس کی وجہ سے ناکابندی کا شکارعلاقے میں بدبو دار دھواں پھیل رہا ہے جبکہ یہ فلسطینی علاقہ پہلے ہی شدید ماحولیاتی مسائل کا شکار ہے۔

بلدیہ غزہ کے ترجمان حسنی مہنہ نے کہا کہ ہم دن رات کام کررہے ہیں لیکن بدقسمتی سے آگ اس اختتام ہفتہ تک جاری رہ سکتی ہے۔

شدید گرمی کی وجہ سے غزہ شہر کے جنوب مشرق میں، اسرائیل کے ساتھ علاحدگی باڑ کے قریب واقع کچرے کی جگہ قریبا 50 ہزار مربع میٹر (539،000 مربع فٹ) پر محیط ہے اور اس علاقے میں گذشتہ ایک ہفتے سے آگ جل رہی ہے۔

اس کچرے کی جگہ سے قریباً ایک کلومیٹر (0.6 میل) دور رہنے والے 64 سالہ سالم عبید نے کہا:’’ہم گذشتہ تین روز سے آگ کی بُو کو برداشت کرنے سے قاصر ہیں، یہ معمول کی بات نہیں،آپ سانس نہیں لے سکتے ہیں‘‘۔

یادرہے کہ اسرائیل اور مصر نے سکیورٹی خدشات کا حوالہ دیتے ہوئے 2007 سےغزہ کی ناکابندی کررکھی ہے۔اس وقت اسلامی تحریک مزاحمت (حماس) نے گنجان آباد ساحلی علاقے کا کنٹرول حاصل کر لیا تھا۔غزہ کے محاصرے کے بعد سے لوگوں اور سامان کی نقل و حرکت محدود ہو کررہ گئی ہے۔

فلسطینیوں کا کہنا ہے کہ ان پابندیوں نے ہنگامی صورت حال سے نمٹنے کی ان کی صلاحیت کو بری طرح متاثر کیا ہے۔

حسنی مہنہ کا کہنا تھا کہ کچرے کو ری سائیکل کرنے کے طریقوں کی کمی نے اس مسئلے کو دائمی بنا دیا ہے، اور کچرے کا ڈھیر سال بہ سال بڑا ہوتا چلا گیا ہے۔

انھوں نے کہا:’’ماحولیاتی اثرات بہت زیادہ ہیں کیونکہ کچھ مواد تو گل سڑجاتا ہے لیکن کچھ دیگر مواد جیسے پلاسٹک نہیں گلتا ہے اور وہ مٹی ہی میں رہتاہے‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں