اسرائیلی فوجی گاڑی میں دھماکہ خیز مواد پھٹ گیا، حماس کے 3 ارکان گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

مغربی کنارے کے جنین کیمپ سے انخلا کے دوران اسرائیلی فوج کی ایک فوجی گاڑی میں دھماکہ خیز مواد پھٹ گیا جس کے بعد صہیونی فورسز نے الجنین کیمپ پر دھاوا بول دیا۔ اس دوران حماس کے ایک رہنما سمیت تین ارکان کو گرفتار کرلیا گیا۔ فلسطینی خبر رساں ایجنسی کے مطابق اس آپریشن میں 6 فلسطینی زخمی بھی ہوئے ہیں۔

اسرائیلی فوج کے ترجمان ایویچائی ادرائی نے ’’ ایکس‘‘ پر کہا کہ اسرائیلی فورسز نے حماس کے 3 کارکنوں کو گرفتار کیا ہے۔ یہ عبدالله حسن محمد صبيح، ورد الشريم اور معتصم جعايصة ہیں۔ ان میں سے ایک فلسطینی کے پاس سے ایم سولہ خودکار رائفل بھی ملی ہے۔ فلسطینی خبر ایجنسی کے مطابق گرفتار تین افراد میں سے دو زخمی بھی ہوئے تھے۔

عینی شاہدین کے مطابق اسرائیلی فوج لگ بھگ ایک گھنٹے تک جنین میں کارروائی کرتی رہی اور پھر فلسطینیوں کو گرفتار کرکے ہیلی کاپٹر میں لے جاتے دیکھا گیا۔

فلسطینی وزارت صحت کے مطابق 4 افراد زخمی حالت میں ہسپتال لائے گئے تھے۔ عینی شاہدین نے بتایا کہ اس سے قبل خصوصی فورس کی آمد پر کیمپ میں سائرن بجنے لگے جس کے بعد کئی فوجی گاڑیوں نے کیمپ پر دھاوا بول دیا۔ ایک سے زیادہ مقامات پر فائرنگ کی آواز سنی گئی۔ اسرائیلی آرمی ریڈیو نے کہا کہ آپریشن کا مقصد مطلوب افراد کو گرفتار کرنا تھا۔

اسرائیلی فوج نے جولائی کے اوائل میں جنین شہر اور اس کے کیمپ میں بڑا فوجی آپریشن کیا تھا جس میں 12 فلسطینی شہید اور 200 کے قریب زخمی ہوئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں