قتل کے الگ الگ کیسز میں ایک یمنی اور ایک سعودی کا سرقلم کردیا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

سعودی عرب کی وزارت داخلہ نے بتایا ہے کہ قتل کے دو الگ الگ کیسزمیں سزائے موت پانے والے دو افراد کی سزا پر عمل درآمد کرتے ہوئے ان کے سر قلم کردیے گئے ہیں۔

سزا پانے والے ملزمان میں ایک سعودی باشندہ اور ایک یمنی شہری ہیں۔

وزارت داخلہ کے مطابق جازان کے علاقے میں قتل کے ایک کیس میں سزائے موت پانے والے ایک یمنی باشندے کا قصاص میں سر قلم کردیا گیا ہے۔

وزارت داخلہ کی طرف سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ سزاپانے والے یمنی مجرم شتوعی حسن محمد عولہ نے ایک یمنی احمد علی محمد ابراہیم کو چاقو کے کئی وار کرکے اسے جان سے مار دیا تھا۔ ملزم کی گرفتاری کے بعد اس کے خلاف قتل کا مقدمہ چلایا گیا اور ملزم کو سزائے موت سنائی گئی تھی۔

شتوعی نے سزا پانے کے بعد مختلف عدالتوں میں سزائے موت کے خلاف اپیل کی تھی مگر تمام عدالتوں کی طرف سے ملزم کی سزا برقرار رکھی گئی۔

کل بدھ چھ ستمبر کو2023ء کو مجرم کا قصاص میں سرقلم کردیا گیا ہے۔

دوسرے کیس میں ایک سعودی عبداللہ بن سهاج بن شبيب العتيبي کوعلي بن عيدان بن معزي الشمري کے قتل کے کیس میں زائے موت پرعمل درآمد کیا گیا۔العتیبی پر مشرقی گورنری میں ایک شہری کےقتل کے الزام میں مقدمہ چلایا گیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں