بین الاقوامی اور علاقائی تنازعات کے حل کے لیے مثبت کوشش کررہے ہیں: سعودی عرب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان نے کہا ہے کہ ان کا ملک سلامتی اور استحکام کے قیام، جامع ترقی پر توجہ مرکوز کرنے اور بات چیت، پرسکون اور کشیدگی میں کمی کے لیے گنجائش فراہم کرنے کی تمام کوششوں کی حمایت کرنے کا خواہاں ہے۔

ہفتے کی شام اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سےخطاب میں شہزادہ فیصل بن فرحان نے کہا کہ "مملکت اقوام متحدہ کے چارٹر اور بین الاقوامی قانونی حیثیت کے اصولوں پر عمل کرنےپرزور دیتی ہے اور ایک بہتر مستقبل کی خواہاں ہے۔ سعودی عرب انسانیت، ملکوں کی خودمختاری، آزادی اور اقدار کے باہمی احترام اور ان کے معاملات میں عدم مداخلت کےاصولوں پر کام کر رہی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ "مملکت کے وژن 2030 کا مقصد تعمیر و ترقی کی کوششوں کو اس انداز میں بڑھانا ہے جو ہماری آنے والی نسلوں کی امنگوں پر پورا اترے، خواتین اور نوجوانوں کو بااختیار بنانے میں اپنا حصہ ڈالے، تخلیقی صلاحیتوں اور اختراعات کو فروغ دے اور اقدار کو مستحکم کرے۔ کھلے پن، مکالمے، رواداری اور بقائے باہمی کے اصول کو آگے بڑھائے۔"

شہزادہ فیصل بن فرحان نے اس بات پر بھی زور دیا کہ " مملکت انسانی حقوق کے معاملے کوبہت اہمیت دیتی ہے، کیونکہ اس کے ضوابط میں واضح متن شامل ہیں جن کا مقصد ان حقوق کو فروغ دینا اور ان کا تحفظ کرنا ہے۔"

انہوں نے مزید کہا کہ سعودی عرب کا مقصد، ترقیاتی نقطہ نظر کے ذریعے ایک جامع اور پائیدار نشاۃ ثانیہ تخلیق کرنا ہے جس کا مرکز اور ہدف انسان ہو جو حال کی ترقی کے پہیے کی رہنمائی کرے اور سائنس کے ساتھ مستقبل کی ترقی کو تخلیق کرے۔"

سعودی عرب کے وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان آل سعود 23 ستمبر 2023 کو نیویارک شہر میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 78ویں اجلاس سے خطاب کر رہے ہیں۔
سعودی عرب کے وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان آل سعود 23 ستمبر 2023 کو نیویارک شہر میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 78ویں اجلاس سے خطاب کر رہے ہیں۔

انہوں نے اس بات پر بھی زور دیا کہ سعودی عرب سلامتی اور استحکام کے قیام، جامع ترقی پر توجہ مرکوز کرنے، بات چیت کے لیے گنجائش فراہم کرنے، پرامن اور تناؤ کو کم کرنے، خطے کے ممالک سے کشیدگی سے بچنے اور مفادات کے تبادلے پر توجہ دینے کے لیے تمام کوششوں کی حمایت کرنے کا خواہشمند ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں