ملینزکچن میں 100 نئے باورچی شامل، سعودی عرب میں پہلی بار معذور افراد کی ککنگ کی تربیت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

سعودی عرب میں پہلی بار خصوصی افراد کی ککنگ کے شعبے میں تربیت دے کر انہیں عالمی باورچیوں میں شامل کیا ہے۔

"ملینز کچن" میں قصیم کے علاقے میں سعودی باورچیوں نے معذور افراد کے علاوہ 100 سے زائد باورچیوں کو تربیت، تعلیم اور ککلنگ کی تربیت دی۔ تربیت حاصل کرنے والوں میں ڈاؤن سنڈروم، اندھے پن، بہرے پن، ذہنی اور جسمانی معذوری کے شکار افراد شامل ہیں۔

ان افراد کو گائیڈز، ٹرینرز اور ماہر اور شوقیہ باورچیوں کے گروپ کے ذریعے کھانے اور مشروبات کی تیاری کی تربیت دی۔

اس اقدام کے پیش کار اور باورچی خانے کے بانی فہد بن سعود العنزی نے معاصر عزیز"سبق" کو بتایا کہ "ہمیں اپنے سعودی کھانوں کی حیثیت پر فخر ہے۔ ہمارے روایتی پکوانوں میں موجود گہرے ورثے نے ہماری میزوں کو مختلف روایتی اشیاء سے مزین کیا ہے۔ ہم اسے مقامی اور عالمی سطح پر پھیلانے کے لیے مستقل اقدامات کے ساتھ کوشش کر رہے ہیں تاکہ سعودی عرب کی بادشاہی پکوان کے فن کی صداقت اور وطن کی ایک مثال بن جائے۔"

انہوں نے مزید کہا کہ سعودی عرب پکوان کے شعبے میں بہت دلچسپی رکھتا ہے اور اس کے فنون کی حمایت کرتا ہے۔ ککنگ کے فنون طرز زندگی اور شہریوں میں موجود رسوم و روایات کی عکاسی کرتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں