حماس نے اپنے جنگجوؤں کو فرضی یہودی کالونی بنا کر حملے کی ٹریننگ دی تھی: ذرائع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

فلسطینی دھڑوں کی طرف سے گذشتہ ہفتے کے روز شروع کیے گئے حملے کا اندازہ لگانے یا اس کا فوری جواب دینے میں ناکامی کے بعد اسرائیلی حکام کو پریشان کرنے والے سوالات کے درمیان، نئی تفصیلات سامنے آئی ہیں۔

ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ حماس نے غزہ کی پٹی میں ایک فرضی یہودی کالونی بنا کراپنے جنگجوؤں کو اس میں تربیت دی تھی۔ انہیں اس انداز میں تربیت دی گئی جس کے مطابق انہوں نے غزہ کی سرحد کی دوسری طرف یہودی بستیوں پر حملہ کرنا تھا۔

متعدد باخبر فلسطینی اور اسرائیلی ذرائع نے اطلاع دی ہے کہ حماس نے ایک دھوکہ دہی کی ایک پیچیدہ مہم چلائی جس کی وجہ سے اسرائیل اس حملے سے حیران رہ گیا۔

فلسطینی عسکریت پسندوں کے متعدد ارکان جنہوں نے بلڈوزر، گلائیڈرز اور موٹرسائیکلوں کا استعمال کیا وہ سب سے مضبوط فوج پر قابو پانے میں کامیاب ہو گئے۔

حماس کے قریبی ذرائع نے بتایا کہ اسرائیل کا خیال ہے کہ وہ غزہ میں کارکنوں کو معاشی مراعات فراہم کرکے جنگ سے تھک جانے والی تحریک پر مشتمل ہے۔ اس کے جنگجو اکثر لوگوں کے سامنے ٹریننگ کرتے ہیں‘‘۔

بلڈوزر غرہ پر لگائی گائی باڑ کو توڑتے ہوئے (رائٹرز)
بلڈوزر غرہ پر لگائی گائی باڑ کو توڑتے ہوئے (رائٹرز)

انہوں نے یہ بھی انکشاف کیا کہ "حماس نے گذشتہ مہینوں کے دوران اسرائیل کو گمراہ کرنے کے لیے ایک غیر مسبوق انٹیلی جنس حربہ استعمال کیا، جس سے یہ عام تاثر دیا گیا کہ وہ اس بڑے آپریشن کی تیاری کے دوران کسی لڑائی یا تصادم میں داخل ہونے کے لیے تیار نہیں ہے"۔

جعلی یہودی کالونی

ذرائع کے مطابق ان تیاریوں میں شاید سب سے اہم چیزحماس کی جانب سے غزہ میں ایک جعلی اسرائیلی بستی کی تعمیر تھی، جسے اس نے طوفان اور فوجی لینڈنگ کی تربیت دی تھی۔ انہوں نے مزید کہا کہ انہوں نے مشقوں کے ویڈیو کلپس بنائے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسرائیل نے انہیں یقیناً دیکھا تھا لیکن انہیں یقین تھا کہ حماس کسی تصادم میں نہیں پڑنا چاہتی ہے۔

اس کے ساتھ ہی حماس نے اسرائیل کو یہ باور کرانے کی کوشش کی کہ وہ اس بات کو یقینی بنانے میں زیادہ دلچسپی رکھتا ہے کہ غزہ کی آبادی 20 لاکھ سے زیادہ کے لیے اسرائیل کے اندر ملازمت کے مواقع موجود ہیں اور اسے نئی جنگ شروع کرنے میں کوئی دلچسپی نہیں ہے۔

نائن الیون کے ماڈل پر

دوسری طرف اسرائیلی دفاعی افواج کے ترجمان میجر نیر دینار نے تصدیق کی کہ حیرت کا عنصر موجود تھا۔ انہوں نے کہا کہ جو کچھ ہوا وہ 11 ستمبر جیسا ہے۔ انہوں نے ہمیں پکڑ لیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ"انہوں نے ہمیں حیران کر دیا اور کئی مقامات سے تیزی سے آئے،سمندر ، زمین اور فضا سے آئے‘۔

اسرائیلی قابض فوج نے کے ایک اور ترجمان نے کہا کہ"ہم نے سوچا کہ وہ کام پر آ رہے ہیں۔ غزہ میں پیسے لانے سے ایک خاص سطح پر سکون پیدا ہو جائے گا، لیکن ہم غلط تھے۔"

اسرائیلی سکیورٹی ذریعے نے بھی اعتراف کیا کہ حماس نے اسرائیلی سکیورٹی سروسز کو دھوکہ دیا۔ انہوں نے کہا کہ "انہوں نے ہمیں یقین دلایا کہ وہ پیسہ چاہتے ہیں" انہوں نے مزید کہا کہ "وہ سارا وقت تربیت میں حصہ لیتے رہے جب تک کہ انہوں نے حملہ نہیں کیا"۔

غزہ کی باڑ میں گھسنا (رائٹرز)
غزہ کی باڑ میں گھسنا (رائٹرز)

گذشتہ دو سالوں کے دوران حماس نے اسرائیل کے خلاف فوجی کارروائیوں سے گریز کیا ہے۔ اس دوران اسلامی جہاد جب اسلامی جہاد نے متعدد بار اسرائیل پر راکٹ حملے کیے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں