فلسطین اسرائیل تنازع

اسرائیل کا انخلاء مکمل ہوتے ہی غزہ پر بڑے پیمانے پر چڑھائی کا اعلان

شمالی غزہ کے شہریوں کو علاقہ فوری چھوڑںے کا حکم، وسیع آپریشن کے لیے ہزاروں فوجی طلب کرلیے گئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

قابض اسرائیلی فوج کے ایک ترجمان نے اتوار کو ‘سی این این‘ کو بتایا کہ اسرائیل غزہ میں "بڑی فوجی کارروائی" شروع کرنے کی تیاری کررہا ہے۔ جیسے جنوبی غزہ سے سول آبادی نقل مکانی کرتی ہے تو یہ آپریشن شروع ہوجائے گا‘‘۔

بڑی فوجی کارروائیاں

ترجمان جوناتھن کونریکس نے مزید کہا کہ ہم جیسے ہی اس بات کا یقین کریں گے کہ عام شہری علاقہ چھوڑ چکے ہیں ہم بڑی فوجی کارروائی شروع کریں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ "غزہ کے باشندوں کے لیے یہ جاننا ضروری ہے کہ ہم وقت کے لحاظ سے بہت محتاط ہیں۔ 25 گھنٹے سے زیادہ وقت کے نفاذ سے پہلے انہیں کافی وارننگ دی گئی تھی۔ غزہ کے باشندوں کے نکلنے کا وقت آگیا ہے"۔

"سامان اٹھاؤ اور نکل جاؤ"

انھوں نے کہا کہ "غزہ کے لوگوں کے لیے ہمارا پیغام ہےکہ اپنا سامان لے کر جنوب کی طرف چلے جائیں۔ حماس کی باتوں میں نہ آئیں۔

ترجمان نے تصدیق کی کہ لاکھوں اسرائیلی ریزرو یونٹ غزہ کی پٹی کے گرد جمع ہیں اور مختلف مشنوں کی تیاری کر رہے ہیں۔

"فضائی، سمندری اور زمینی حملہ"

اسرائیلی فوج نے کل سنیچر کو کہا تھا کہ وہ غزہ پر ایک وسیع فضائی، سمندری اور زمینی حملہ کرنے کی تیاری کر رہی ہے۔دوسری طرف اسرائیلی فوج کی کارروائیوں کا دوسرے ہفتے میں داخل ہو رہی ہیں جس سے غزہ محصور لوگوں کی مشکلات مزید بڑھ رہی ہیں۔

کل صبح اسرائیلی فوج کی طرف سے دس لاکھ سے زائد فلسطینیوں کو پٹی کے شمالی حصے سے نکل کر جنوب کی طرف جانے ڈیڈ لائن دی گئی تھی۔

انہوں نے ہفتے کی شام کو ایک بیان میں کہاکہ "زمینی بازو اور ٹیکنالوجی اور لاجسٹکس ڈویژن اب فوجی دستوں کو وسیع لڑائی کے لیے تیار کرنے کے لیے کام کر رہے ہیں۔"

انہوں نے مزید کہا کہ "فارورڈ لاجسٹک مراکز قائم کیے گئے ہیں جس کا مقصد جنگی افواج کو تیزی سے آگے بڑھانے اور انہیں ہر طرح کے اسلحے سے لیس کرنا ہے"۔

انہوں نے مزید کہا کہ "حالیہ دنوں میں لڑائی کے لیے ضروری آلات کو فورسز کی پوزیشنوں پر منتقل کر دیا گیا ہے۔ اس مرحلے پر ٹیکنالوجی اور لاجسٹکس ڈویژن کے مختلف یونٹس جدید آلات کی بحالی کو مکمل کرنے کے لیے کام کر رہے ہیں۔ "

دوسری جانب حماس نے اسرائیل کی جانب سے غزہ پر عنقریب حملے کے اعلان کے جواب میں ایک ویڈیو جاری کی ہے۔

آگے مشکل ہفتے

ایک اسرائیلی فوجی ترجمان نے اعتراف کیا کہ آنے والے چند ہفتے مشکل ہوسکتے ہیں۔

خبر رساں ادارے رائیٹرز کے مطابق انہوں نے اس بات پر بھی زور دیا کہ "ہمارا مقصد حماس اور دہشت گرد تنظیموں کی حکمرانی اور فوجی صلاحیتوں کو مکمل طور پر تباہ کرنا ہے۔"

انہوں نے کہا کہ "آپریشن آ رہا ہے اور اس میں کافی وقت لگے گا۔ فورسز شمال میں پوری طرح تیار ہیں"۔

اموات

اسرائیلی حکام کے مطابق جارحیت شروع ہونے کے بعد سے اب تک 1,300 سے زیادہ اسرائیلی مارے جا چکے ہیں اور فلسطینی عسکریت پسندوں نے کم از کم 120 افراد کو یرغمال بنا کر غزہ منتقل کر دیا ہے۔

حماس کے زیر کنٹرول غزہ کی پٹی میں اسرائیلی جوابی بمباری میں 2200 سے زائد فلسطینی شہید ہوئے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں