غزہ میں جنگ طویل ہو گی، برطانیہ مدد کرے: نیتن یاہو کی رشی سونک ملاقات میں اپیل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

غزہ میں اسرائیل اور مسلح فلسطینی دھڑوں کے درمیان کشیدگی جاری ہے۔ اس کشیدگی کے جلو میں برطانوی وزیر اعظم رشی سونک نے جمعرات کو تل ابیب میں اسرائیلی صدر اسحاق ہرتصوغ اور وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو سے بات چیت کی ہے۔

نیتن یاہو نے سونک کو ایک مباحثے کے سیشن کے بعد ایک پریس کانفرنس کے دوران بتایا کہ غزہ کی جنگ طویل ہو گی اور اسرائیل کو برطانیہ کی مسلسل مدد کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ حماس کے خلاف جنگ تنہا اسرائیل کی نہیں بلکہ پوری دنیا کی جنگ ہے۔ دنیا کو حماس کے خاتمے کے لیے متحد ہونا چاہیے۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ "ہم پیچھے نہیں ہٹیں گے۔ ہم حماس کو شکست دیں گے اور یرغمالیوں کو رہا کرائیں گے۔ ہمارے لوگ متحد ہیں اور دہشت گردی کے مقابلے میں جو بھی ضروری ہوا کرنے کے لیے تیار ہیں۔"

اس موقعے پر برطانوی وزیر اعظم رشی سونک نے کہاکہ "ہمیں ان ہولناک مناظر اور مشکل لمحات پر افسوس ہے جن سے اسرائیل گذر رہا ہے۔ ہم اسرائیل کے اپنے دفاع کے حق کی حمایت کرتے ہیں۔"

برطانوی وزیر اعظم رشی سونک نے اپنے اسرائیلی ہم منصب سے وعدہ کیا کہ برطانیہ "مشکل کی گھڑی" میں اسرائیل کے ساتھ کھڑا رہے گا۔ انہوں نے غزہ میں امداد کی اجازت دینے کے فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا کہ اسرائیل شہریوں کی ہلاکتوں کو کم کرنے کی پوری کوشش کر رہا ہے۔ سونک نے زور دے کر کہا کہ "برطانیہ یرغمالیوں کی رہائی کے لیے اسرائیل کے ساتھ تعاون جاری رکھے گا".

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں