یرغمالیوں کی تلاش جاری،ممکن ہے حماس کے جنگجو تل ابیب میں داخل ہوئے ہوں:اسرائیلی فوج

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی فوج نے حماس کے ہاتھوں یرغمال بنائے گئے افراد کے بارے میں معلومات اکٹھا کرنے کے لیے غزہ کے اندر خصوصی کارروائیوں کے نفاذ کا اعلان کیا ہے۔

ٹائمز آف اسرائیل کے مطابق اسرائیلی فوج کے ایک ترجمان نے سات اکتوبر کو شروع ہونے والے ’طوفان الاقصیٰ‘ آپریشن میں جمعرات کو تصدیق کی کہ فوج ابھی تک اسرائیل میں فلسطینی عسکریت پسندوں کی موجودگی کے امکان کو رد نہیں کر سکتی۔

اسرائیلی فوج کے ترجمان ڈینیئل ہاگری نے کہا کہ فوج نے ابھی غزہ کی پٹی کے اطراف کے علاقے کا سروے مکمل نہیں کیا ہے۔ انہوں نے انکشاف کیا کہ گزشتہ رات فورسز نے ایک تھکے ہوئے رکن کو تلاش کیا اور اسے اس وقت گرفتار کر لیا جب وہ غزہ واپس جانے کی کوشش کر رہا تھا۔

انہوں نے کہا کہ "حالیہ دنوں میں اسرائیل میں کوئی نئی دراندازی نہیں ہوئی ہے"۔

اخبار کے مطابق اسرائیلی فوج حماس کے خلاف جنگ کے اگلے مراحل کی تیاری جاری رکھے ہوئے ہے، جس میں ایک بڑا زمینی حملہ بھی متوقع ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ "گذشتہ روز ہم نے سروے اور اغوا کاروں کا پتہ لگانے کے مقصد کے لیے محدود اور ٹارگٹڈ چھاپے مارے۔ "دہشت گردوں" کے ارد گرد کے علاقے کو صاف کرنے کا مشن ابھی ختم نہیں ہوا ہے۔ اب تک اسرائیلی فوج کے ہاتھوں مارے جانے والوں میں سے 306 خاندانوں کو مطلع کر دیا گیا ہے۔

قابل ذکر ہے کہ غزہ کی پٹی شدید اسرائیلی بمباری کے نشانے پر ہے جس میں فلسطینی وزارت صحت کے مطابق محصور فلسطینی علاقے میں اب تک کم از کم 3,400 افراد شہید اور ہزاروں زخمی ہو چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں