فلسطین اسرائیل تنازع

اسرائیلی فوج کی حملے تیز کرنے کی ایک اور دھمکی

دوسروں کے مطابق نہیں، بہترین ترین تیاری کے تقاضوں کے مطابق آگے بڑھیں گے: اسرائیلی فوجی ترجمان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیل نے دھمکی دی ہے کہ اس کی فوج غزہ پر حملے تیز کرنے والی ہے۔ یہ دھمکی ہفتے کے روز ایک اسرائیلی فوجی ترجمان کی طرف سے اس وقت سامنے آئی جب غزہ پر اسرائیلی حملے تیسرے ہفتے میں داخل ہوئے اور پہلے امدادی قافلے کو غزہ میں سامان لے جانے کی اجازت ملی۔

اسرائیل کے فوجی ترجمان اس امر کا اظہار ایک پریس کانفرنس کے دوران کیا ہے۔ سات اکتوبر سے حماس کے راکٹ حملے سے لے اب تک تقریبا ساڑھے چار ہزار فلسطینی غزہ میں شہید ہو چکے ہیں۔ ان میں بڑی تعداد فلسطینی بچوں کی ہے۔

اسرائیل اس سے پہلے فضائی حملوں کو جاری رکھنے کے ساتھ ساتھ ہی غزہ کے ارد گرد اپنے بدترین محاصرے کے دوران ہزاروں فوجیوں اور سینکڑوں ٹینکوں کو تعینات کر چکا ہے۔ جو اس کے زمینی حملے کی تیاری کا مظر ہیں۔

فوجی ترجمان ایڈمرل ڈینیل ہاگری نے کہا 'ہمیں جنگ کے اگلے مرحلے میں بہترین تیاری کے تقاضے پورے کرتے ہوئے داخل ہونا ہے نہ کہ دوسروں کے مشوروں کی بنیاد پر، اس سلسلے میں آج سے ہم حملوں کو بڑھا رہے ہیں تاکہ اگلے مرحلے کے لیے درپیش خطرے کو پہلے کم کر سکیں۔

دریں اثنا اسرائیل کے چیف آف سٹاف لیفٹیننٹ جنرل ہرزی حلیوی نے فرنٹ لائن کا دورہ کر کے ایک انفنٹری بریگیڈ سے وابستہ فوجیوں سے ملاقات کی ہے۔

فوجی کمانڈر چیف آف سٹاف لیفٹیننٹ جنرل ہرزی حلیوی نے کہا ' غزہ انتہائی گنجان آباد ہے اور دشمن نے تیاری میں کافی چیزیں بھی جمع کر رکھی ہیں۔ لیکن ہم بھی ان کے لیے پوری تیاری کر رہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں