حزب اللہ نے حملہ کیا تو ایرانی ملاؤں کا نام و نشان مٹا دیں گے: اسرائیلی وزیر برس پڑا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

7 اکتوبر کو اسرائیل اور حماس کے درمیان شروع ہونے والی جنگ کے پس منظر میں مشرق وسطیٰ میں ایک وسیع تر علاقائی تنازعے کے پھوٹ پڑنے کے بارے میں بین الاقوامی تشویش کے جلو میں ایک اسرائیلی وزیر نے ایران کو سخت الفاظ میں متنبہ کیا ہے۔

اسرائیل کے وزیر اقتصادیات نیر برکات نے دھمکی دی کہ اگر لبنانی حزب اللہ جنگ میں شامل ہوتی ہے تو وہ "سانپ کا سر" کاٹنے کے ایران پر حملہ کریں گے اور ایران کی اینٹ سے اینٹ بجا دیں گے۔ انہوں نے خبردار کیا کہ ایران حزب اللہ کو جنگ میں دھکیلتا ہے تو تہران کو دوسرا غزہ بنا دیں گے۔

انہوں نے کہا کہ اگر لبنان میں ان کی دہشت گرد پراکسی حزب اللہ اسرائیل پر حملہ کرتی ہے تو ایرانی ملاؤں کا نام و نشان مٹا دیا جائے گا۔،

"سانپ کا سر"

انہوں نے اتوار کے روز برطانوی اخبار ڈیلی میل کو انٹرویو دیتے ہوئے مزید کہا کہ ان کا ملک نہ صرف "حزب اللہ کو شمالی محاذ کھولنے کی صورت میں ختم کر دے گا بلکہ خود ایران کو نشانہ بنائے گا"۔

انہوں نے مزید کہا کہ"اگر ہمیں معلوم ہوا کہ وہ اسرائیل کو نشانہ بنانا چاہتے ہیں تو ہم اس محاذ پر جواب دینے سے مطمئن نہیں ہوں گے بلکہ ہم سانپ کے سر پر جائیں گے، جو کہ ایران ہے"۔

انہوں نے مزید کہا کہ "ایران کے حکمران رات کو اچھی طرح نہیں سوئیں گے۔ ہم اس بات کو یقینی بنائیں گے کہ اگر انہوں نے شمالی محاذ کھولا تو انہیں بھاری قیمت چکانا پڑے گی"۔

"ہم ایرانیوں کو کچل پر رکھ دیں گے "

اس کے علاوہ انہوں نے زور دیا کہ لبنان اور حزب اللہ اس کی بھاری قیمت ادا کریں گے جیسی حماس ادا کر رہی ہے۔

ایرانی سپریم لیڈر خامنہ ای
ایرانی سپریم لیڈر خامنہ ای

انہوں نے اس بات پر بھی زور دیا کہ ان کے ملک کا پیغام بہت واضح ہے جو کہ ایران کے صدر اور حکومت کو پہنچانا ہے۔

نیر برکات نے کہا کہ "ہمارے پاس اپنے دشمنوں کے لیے بہت واضح پیغام ہے۔ ہم ان سے کہتے ہیں، دیکھو غزہ میں کیا ہو رہا ہے- اگر تم نے ہم پر حملہ کیا تو تمہارے ساتھ وہی سلوک ہو گا۔ زمین پر تمہارا نام ونشانہ مٹا دیں گے"۔

یہ بیانات اسرائیلی فوج کی طرف سے آج لبنان کو جنگ میں گھسیٹے جانے کے خلاف جاری کردہ انتباہ کے دوران سامنے آئے ہیں۔

خیال رہے کہ سات اکتوبر کو حماس کے اسرائیل پرحملے کے بعد صہیونی فوج نے غزہ کی پٹی پر وحشیانہ بمباری جاری رکھی ہوئی ہے۔ اس میں اب تک ساڑھے چار ہزار سے زاید فلسطینی شہید اور ہزاروں کی تعداد میں زخمی ہوئے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں