حماس کے پاس کیمیائی ہتھیار بنانے کے حوالے سے ’القاعدہ والا مواد‘ تھا: اسرائیلی صدر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسرائیلی صدر آئزک ہرزوگ نے اتوار کے روز کہا کہ فلسطینی عسکریت پسند گروپ حماس کے جنگجو جنہوں نے اسرائیل پر حملہ کیا، وہ "القاعدہ کا سرکاری مواد" لے کر جا رہے تھے کہ کیمیائی ہتھیار کیسے بنائے جاتے ہیں۔

ہرزوگ نے ایکس (سابقہ ٹویٹر) پر کہا، "حماس کے دہشت گردوں سے ملنے والی یو ایس بی ڈیوائس سے ثابت ہوتا ہے کہ قاتلانہ دہشت گرد تنظیم نے القاعدہ کے دہشت گردوں کی طرح شہری آبادی کے خلاف سائینائیڈ استعمال کرنے کا منصوبہ بنایا تھا۔"

ہرزوگ نے اسکائی نیوز کے ساتھ ایک انٹرویو میں کہا کہ اسرائیلی فورسز نے کبوتز بیری میں حماس کے ایک مردہ جنگجو کے جسم پر یہ مواد دریافت کیا۔ "یہ القاعدہ کا مواد ہے۔ القاعدہ کا سرکاری مواد۔ ہم داعش، القاعدہ اور حماس سے نبردآزما ہیں۔

ہرزوگ نے کہا، "اس مواد میں کیمیائی ہتھیار تیار کرنے کے بارے میں ہدایات تھیں۔

ہرزوگ نے کہا، "یہ صورت حال کتنی چونکا دینے والی ہے کہ ہم ان ہدایات کو دیکھ رہے ہیں کہ سائینائیڈ کے ساتھ ایک قسم کا غیر پیشہ ور کیمیائی ہتھیار کیسے بنانا اور کیسے چلانا ہے۔"

اسرائیلی صدر نے مزید کہا کہ یہ دعوے کہ اسرائیل نے پانی، بجلی اور ایندھن کو غزہ کی پٹی میں داخل ہونے سے مکمل طور پر روک دیا ہے، "مسخ شدہ" ہیں۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ حماس کے میزائل تھے جنہوں نے غزہ میں بجلی کے بنیادی ڈھانچے کو تباہ کر دیا – اس کا "ہم سے کوئی تعلق نہیں"۔ انہوں نے کہا۔ "ہم [غزہ میں] صرف 7 فیصد پانی فراہم کرتے ہیں۔ انسانی ضروریات کے لیے ایندھن موجود ہے۔"

یو این آر ڈبلیو اے (اقوامِ متحدہ کی ریلیف اینڈ ورکس ایجنسی) کے کمشنر جنرل فلپ لازارینی نے ہفتے کے روز غزہ کی امداد پر کہا: "تین دنوں میں یو این آر ڈبلیو اے کا ایندھن ختم ہو جائے گا جو غزہ کی پٹی میں ہمارے انسانی ہمدردی کے کاموں کے لیے اہم ہے۔ ایندھن کے بغیر پانی نہیں ہوگا، کام کرنے والے ہسپتال اور بیکریاں نہیں ہوں گی۔ ایندھن کے بغیر اشد ضرورت مندوں تک امداد نہیں پہنچے گی۔ ایندھن کے بغیر کوئی انسانی امداد نہیں ہوگی۔"

انہوں نے مزید کہا: "میں تمام فریقین اور ان پر اثر و رسوخ رکھنے والوں سے مطالبہ کرتا ہوں کہ وہ فوراً غزہ کی پٹی میں ایندھن کی فراہمی کی اجازت دیں اور اس بات کو یقینی بنائیں کہ ایندھن کا استعمال سختی سے صرف انسانی ہمدردی کے کاموں کے لیے کیا جائے۔"

لازارینی نے روشنی ڈالی: "میں کل کے قافلے کا غزہ میں خیرمقدم کرتا ہوں جو 20 لاکھ افراد کو متأثر کرنے والے انتہائی سخت محاصرے کے دو ہفتوں میں آنے والا پہلا قافلہ تھا۔ تاہم یہ کافی سے بہت کم ہے۔ ضروریات پوری کرنے کے لیے غزہ کو انسانی فراہمی کی ایک بلاتعطل اور تیز تر لائن کی ضرورت ہے۔"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں