فلسطین اسرائیل تنازع

حماس کے خلاف لاکھوں ریزرو طلب،مگرنیتن یاھوکا بیٹا امریکا میں سیر سپاٹے میں مصروف

اسرائیل کے فوجی اور عوامی حلقوں میں نیتن یاھو کے بیٹے کی امریکا میں عیاشیوں میں مصروف کیوں ہے۔ ایک ایسے وقت میں جب اسرائیل حالت جنگ میں ہے اور ریزروفرنٹ لائن پرہیں۔ نیتن یاھو کے بیٹے کی عدم موجودگی سوالیہ نشان ہے۔

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

اسرائیل میں درجنوں ریزرو فوجیوں نے میڈیا کے ذریعے وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو کے بیٹے یائر نیتن یاہو کے بارے میں پوچھا ہے کہ وہ کہاں ہے؟۔ بتایا جاتا ہے حماس کے خلاف جنگ کے لیے فوج کی طرف سے بلائے گئے تین لاکھ سے زیادہ ریزرو فوجیوں میں یہ سوال پوچھا جا رہا ہے کہ وزیراعظم نے اپنے بیٹے کو اس جنگ میں کیوں نہیں بلایا۔

ریزرو فوجیوں کو توقع ہےکہ نیتن یاھو کے تینوں بیٹے اس جنگ میں پیش پیش ہوں گے۔

مگر حقیقت اس کے برعکس ہے کیونکہ نیتن یاھو کا ایک بیٹا یائر نیتن یاھو امریکی ریاست فلوریڈا کے شہر میامی کے ریزورٹس میں دولت مند سیاح کی طرح پرتعیش زندگی گزار رہا ہے۔

میڈیا میں یائر نیتن یاھو کی سیر تفریح اور اپنی گرل فرینڈ کے ساتھ رنگ رلیاں منانے کی تصاویر اور ویڈیوز سامنے آئی ہیں۔

ریزرو فوجی یائر نیتن یاھو کے بارے میں حیران ہیں۔ اس کی عمر 32 سال ہے کہ حالت جنگ میں اس نے "اپنا ملک چھوڑ دیا"۔ ان میں سے درجنوں نے اس پر الزام لگایا کہ وہ حالت جنگ میں سیر وتفریح میں مصروف ہیں۔

ترکیہ میڈیا کی طرف سے شائع ہونے والی ایک متفقہ رپورٹ العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطالعے سےگذری ہے۔ اس کے علاوہ یائر نیتن یاھو کے سیر سپاٹوں کے بارے میں استنبول کے اخبار سپر ہیبر اور برطانوی اخبار ٹائمزنے بھی تفصیلات شائع کی ہیں۔

وزیراعظم کا بیٹا کہاں ہے؟

سوال کرنے والوں میں سے ایک فوجی جس نے سکیورٹی وجوہات کی بنا پر اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی درخواست کی تھی نے ایک صحافی کو بتایا کہ یائر نیتن یاھو جو بہ ظاہر ایک غیر یہودی امریکی سے ڈیٹنگ کر رہا ہے کئی مہینوں سے میامی کے ساحلوں پر اپنی زندگی سے لطف اندوز ہو رہا ہے۔ اس وقت فوج جنگ میں اگلے مورچوں پر ہےمگر وزیراعظم کے فرزند کو سیر سپاٹے سے فرصت نہیں۔ ان کے اس طرز عمل پر عوامی حلقوں میں شدید غصہ پایا جا رہا ہے۔

یائر نے 2014 میں ایک نارویجن لڑکی سینڈرا لیکنگر کے ساتھ، جس سے وہ ڈیٹنگ کر رہا تھا، اور وہ بھی یہودی نہیں تھی۔
یائر نے 2014 میں ایک نارویجن لڑکی سینڈرا لیکنگر کے ساتھ، جس سے وہ ڈیٹنگ کر رہا تھا، اور وہ بھی یہودی نہیں تھی۔

ریزرو فوجی نے مزید کہا کہ "ہم جو وطن کی حفاظت کے لیے اپنی ملازمتیں، اپنے خاندان، اپنے بچے چھوڑ دیتے ہیں، اس صورت حال کے ذمہ دار نہیں ہیں۔ ہمارے بھائی، ہمارے باپ اور ہمارے بیٹے سب فرنٹ پرہیں، لیکن یائر ابھی تک ہمارے درمیان نہیں ہے.کیوں؟

ایک اور رضاکارنے اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ "میں امریکا سے واپس آیا ہوں۔ میرا خاندان امریکا میں ہے اور میں وہی جاب کرتا ہوں۔ وہاں رہنے اور اپنا ملک چھوڑنے کا کوئی راستہ نہیں ہے۔ میری قوم اس نازک وقت میں یہ پوچھتی ہے کہ وزیر اعظم کا بیٹا کہاں ہے؟ ہم اسے اسرائیل میں کیوں نہیں دیکھتے؟ اسرائیلیوں کے طور پر یہ ہمارے لیے تنہا ترین لمحہ ہے، اور اس کے لیے ہم سب کو اب یہاں ہونا چاہیے،چاہے وہ وزیراعظم کا صاحب زادہ ہو یا کوئی اور ہو۔

یائر اپنے والد کا آن لائن دفاع کرنے میں تقریباً خصوصی طور پر مہارت رکھتا ہے۔ اس کے بارے میں معلومات یہ ہیں کہ وہ پہلے "آرمی سپوکسپرسن یونٹ" میں خدمات انجام دے چکا ہے۔ "شورات حدین" تنظیم کے لیے مواصلات کے ڈائریکٹر کے طور پر کام کرتا ہےجسے ایک اسرائیلی غیر سرکاری تنظیم کہا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ وہ "دہشت گردانہ" حملوں کے متاثرین کو قانونی خدمات فراہم کرتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں