حماس نے جنگ چھیڑنے کے لیے ہسپتالوں کے استعمال کا اسرائیلی الزام مسترد کردیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی فوج نے جمعہ کے روز حماس پر الزام لگایا کہ وہ غزہ کی پٹی کے ہسپتالوں کو فوجی مقاصد کے لیے استعمال کر رہی ہے۔ اس طرح حماس فلسطینی علاقے اور اس کے اطراف میں جنگ بڑھ رہی ہے۔ حماس نے اس الزام کو یکسر مسترد کردیا ہے۔ غزہ میں کام کرنے والی اقوام متحدہ کی اہم ایجنسی نے کہا کہ اس کے پاس پہلے سے ہی امداد کا رخ موڑنے سے روکنے کا طریقہ کار موجود تھا۔

اسرائیلی فوجی ترجمان ہگاری نے کہا غزہ میں حماس ہسپتالوں سے جنگ چھیڑ رہی ہے۔ انہوں نے صحافیوں کو بتایا کہ یہ گروپ اپنی کارروائیوں میں مدد کے لیے ہسپتالوں میں ذخیرہ شدہ ایندھن بھی استعمال کر رہا ہے۔ ہگاری نے اس حوالے سے خاص طور پر الشفا ہسپتال کی نشاندہی کی جو غزہ کا سب سے بڑا ہسپتال ہے، جہاں سے حماس کے عسکریت پسند کام کر رہے تھے۔ ہگاری نے کہا شفا اور دیگر ہسپتالوں میں دہشت گرد آزادانہ نقل و حرکت کر رہے ہیں۔

حماس کے سیاسی بیورو کے ایک سینئر رکن عزت الرشق نے اسرائیلی فوج کے الزامات پر فوری جواب دیا اور ان الزامات کو بے بنیاد قرار دے دیا۔ عزت رشق نے کہا دشمن فوج کے ترجمان نے جو کچھ کہا اس میں کوئی صداقت نہیں ہے۔ ان الزامات کے ذریعہ دشمن ہمارے لوگوں کے خلاف ایک نئے قتل عام کی راہ ہموار کر رہا ہے۔

قبل ازیں فلسطینی پناہ گزینوں کے لیے اقوام متحدہ کی ایجنسی (UNRWA) کے کمشنر جنرل فلپ لازارینی نے اسرائیل کے اس الزام کی تردید کردی تھی کہ امداد کا رخ موڑا جا رہا ہے۔ لازارینی نے کہا کہ ہمارے پاس نگرانی کا ٹھوس طریقہ کار ہے، انروا کسی بھی انسانی امداد کو غلط ہاتھوں جانے کی اجازت نہیں دیتا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں