امدادی سامان غزہ لے جانے کی اجازت دیں گے: اسرائیل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

کئی ہفتوں کی ناکہ بندی کے بعد اسرائیلی فوج نے کہا ہے کہ وہ خوراک، پانی اور ادویات سے لدے ٹرکوں کو محصور غزہ کی پٹی میں داخل ہونے سے نہیں روکے گی، تاہم دوسری طرف شدید بمباری میں امدادی قافلوں کا غزہ میں داخلہ ممکن نہیں رہا ہے۔

مواصلاتی تعطل امدادی مشن میں رکاوٹ

فوج نے اپنے بیان میں مزید تفصیلات فراہم نہیں کیں تاہم اسرائیلی اعلان چھٹے فلسطینی امدادی قافلے کے رفح لینڈ کراسنگ کے ذریعے داخل ہونے کے چند گھنٹے بعد سامنے آیا جہاں سے اب تک 84 ٹرک گزر چکے ہیں۔

ان پیش رفتوں کے باوجود مصری ہلال احمر نے ہفتے کے روز اعلان کیا کہ اسرائیل کی جانب سے غزہ کی پٹی سے مواصلات اور انٹرنیٹ منقطع کرنے کی وجہ سے چھٹے بیچ میں طبی اور انسانی امداد کے 10 ٹرکوں کے داخلے میں رکاوٹ پیدا ہوئی۔ انٹرنیٹ اور موبائل سروس بند کیے جانے کی وجہ سے ہلال احمر اور اقوام متحدہ کی ریلیف اینڈ ورکس ایجنسی برائے پناہ گزین (UNRWA) کے درمیان رابطہ نہیں ہو سکا۔

شمالی سیناء میں مصری ہلال احمر سوسائٹی کے سیکرٹری جنرل رائد عبدالناصر نے ایک بیان میں کہا کہ امدادی سامان کی چھٹی کھیپ کے اندر امداد کے 10 ٹرک العوجہ کراسنگ پر معائنہ کےعمل سے گذر چکے ہیں۔ نہیں گذشتہ روز غزہ بھیجا جانا تھا مگر ہلال احمر کے ساتھ رابطہ نہ ہونے کی وجہ سے وہ غزہ میں داخل نہیں ہو سکا۔

انہوں نے مزید کہا کہ امداد کے 20 ٹرک معائنہ کے طریقہ کار کو مکمل کرنے کے لیے ہفتے کی صبح العوجہ کراسنگ تک پہنچے، جن میں سے 10 کو معائنہ مکمل کرنے کے بعد فلسطینی ہلال احمر کو پہنچا دیا گیا۔

عبدالناصر نے مزید کہا کہ بقیہ دس ٹرکوں کے معائنے میں تاخیر ہوئی، ان کا معائنہ مکمل کرنے کے بعد ہم ابھی تک انہیں وصول کرنے کے لیے کسی فریق سے رابطہ نہیں کر سکے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں

  • مطالعہ موڈ چلائیں
    100% Font Size