غزہ کی پٹی کو ایندھن کی فراہمی کی شرط کی وجہ سے غزہ میں قیدیوں کے مذاکرات ناکام ہوگئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

’این بی سی‘ نیوز چینل نے پیر کے روز کہا ہے کہ فلسطینی تحریک حماس اور اسرائیل کے درمیان قیدیوں کے تبادلے کے مذاکرات میں اسرائیل کی جانب سے ایندھن کی کھیپ غزہ کی پٹی میں لانے سے انکار کی وجہ سے مشکلات کا سامنا ہے۔

نیٹ ورک نے ایک سابق امریکی اہلکار کے حوالے سے بتایا کہ اسرائیل، امریکا اور دیگر ممالک اپنے زیر حراست شہریوں کے ایک بڑے گروپ کو رہا کرنے کے لیے پرعزم ہیں۔

نیٹ ورک نے بتایا کہ حماس اور دیگر فلسطینی دھڑوں جنہوں نے 7 اکتوبر کو اسرائیلی شہروں اور بستیوں پر حملہ کیا تھا ان کے پاس 230 قیدی ہیں۔

7 اکتوبر کی کارروائی میں حماس کے زیر حراست قیدیوں کی فائل میں تیزی سے پیش رفت دیکھنے میں آ رہی ہے، جنگ بندی اور قیدیوں کے تبادلے کے معاہدے تک پہنچنے کے لیے مصر کے تیز تر رابطوں کے ساتھ قطر ایسے ہی رابطےکررہا ہے۔ دوسری طرف اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو دباؤ میں ہیں۔

غزہ میں یرغمال بنائے گئے اسرائیلیوں کے اہل خانہ نے بھی غزہ کی پٹی میں زمینی حملے کی مخالفت کی۔ دوسری طرف حماس نے اسرائیل سے جیلوں میں قید تمام فلسطینیوں کی فوری رہائی کا مطالبہ کیا ہے۔

قاہرہ نیوز چینل نے اتوار کے روز اعلیٰ سطحی ذرائع کے حوالے سے بتایا کہ مصرکی جانب سے غزہ کی پٹی میں جنگ بندی کے معاہدے ، قیدیوں اور زیر حراست افراد کے تبادلے کے لیے بین الاقوامی اور علاقائی طور پر تمام متعلقہ ممالک اور فریقین کے ساتھ وسیع رابطے کیے جا رہے ہیں۔

اسرائیل کی جانب سے اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو 7 اکتوبر کو اسرائیلی قصبوں اور بستیوں پر اس کے اچانک حملے کے بعد سے غزہ کے اندر حماس کے زیر حراست 230 سے قیدی ہیں۔

نیتن یاہو نے کہا کہ اسرائیل حماس کے خاتمے اور غزہ میں قیدیوں کی رہائی کے لیے کام کر رہا ہے۔

لیکن کوئی نہیں جانتا کہ اندرونی تنقید اور قیدیوں کے اہل خانہ سے غزہ پر حملے میں محتاط رہنے کے مطالبات میں پھنسے نیتن یاھو حماس کی بیخ کنی میں کامیاب ہوسکتے ہیں یا نہیں۔

ٹائمز آف اسرائیل اخبار نے اسرائیلی زیر حراست افراد کے خاندانوں میں سے ایک کے حوالے سے کہا کہ انہوں نے نیتن یاہو سے اپیل کی کہ وہ فوجی آپریشن شروع نہ کریں جس سے ان کے خاندانوں کی زندگیوں کو خطرہ لاحق ہو۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں