فلسطین اسرائیل تنازع

سکول کے قریب اسرائیلی بمباری سے 27 فلسطینی شہیدوں کی لاشیں نکال لی گئیں

سکول اقوام متحدہ کی ایجنسی'انروا' چلاتی ہے، انروا کا ابھی کو رد عمل سامنے نہیں آیا ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اقوام متحدہ کی ریلیف اینڈ ورکس ایجنسی ’’اونروا‘‘ کے زیر انتظام چلنے والے سکول کے نزدیک اسرائیلی بمباری کے نتیجے میں ہونے والی تباہی کے بعد اب تک 27 شہدا کی لاشیں ملبے سے نکال لی گئی ہیں۔ سکول اقوام متحدہ کی طرف سے قائم کردہ ہے جس کے بالکل قریب جمعرات کے روز حملہ کیا گیا ہے۔

وزارت صحت کے ترجمان کے مطابق دس سال سے بھی کم عمر کے بچے قریب ہی قائم کینٹین سے کچھ خرید رہے تھے کہ انہیں بھی بمباری کے ذریعے ٹکڑوں میں تقسیم کر دیا گیا۔

فلسطینی وزارت صحت کے مطابق اب تک 27 افراد کی لاشین ملبے کے ڈھیروں سے نکالی جا چکی ہیں تاہم ابھی لاشوں کو نکالنے اور اپنے پیاروں کو تلاش کرنے کی کوششیں جاری ہیں۔

اس بمباری کے بعد فوٹیجز میں دیکھا جا سکتا ہے کہ متعدد افراد ہلاک ہو گئے اور اس کے بعد کئی لوگ ہجوم کی شکل میں بھاگتے ہوئے دکھائی دیے۔

ادھر اقوام متحدہ کے ادارے 'انروا' کی طرف سے اس بمباری پر فوری طور پر کوئی رد عمل سامنے نہیں آیا ہے۔

خیال رہے یہ سکول اقوام متحدہ کا ادارہ 'انروا' ہی چلاتا تھا۔ رپورٹ میں مزید یہ بتایا گیا ہے کہ بریج پناہ گزین کیمپ میں کم از کم 15 افراد کی شہادت ہو چکی ہے۔ یہ واقعہ اسرائیلی بمباری کا نتیجہ ہے۔

بریج کے ایک رہائشی نے کہا '27 سالہ شخص نے کہا مجھے ملبے کے ڈھیرے سے نکالا گیا، ہمارا سارا گھر ہمارے اوپر گر گیا تھا۔ اس کے علاوہ بھی بیس سے زائد گھر ملبے کا ڈھیر بنے۔ واضح رہے غزہ کی وزارت صحت کا کہنا ہے کہنا ہے کہ اب تک 9061 فلسطینی شہید ہو چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں