غزہ کے ایک ہسپتال سے گولی چلنے کی اسرائیلی ویڈیو، حماس کی تردید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

اسرائیل اور حماس کے درمیان جنگ دوسرے مہینے میں داخل ہوگئی ہے۔ شدید بمباری میں غزہ کی پٹی کو کھنڈر بنا دیا گیا ہے۔ اسرائیلی فوج نے اتوار کے روز ایسی تصاویر شائع کیں جن میں کہا گیا ہے کہ مسلح تحریک حماس کے جنگجو غزہ کے ایک ہسپتال سے فائرنگ کر رہے ہیں اور دیگر تصاویر میں حماس کی موجودگی کا پتہ چلتا ہے۔ ہسپتال سے 75 میٹر کے فاصلے پر راکٹ لانچنگ سائٹ اور اس کے نیچے حماس کی سرنگیں دکھائی گئی ہیں۔

اسرائیلی فوج کے ترجمان ڈینیئل ہاگری کے مطابق پریس پریزنٹیشن کے دوران سامنے آنے والی تصاویر اور انٹیلی جنس سروس کی دستاویزات سے حاصل کی گئی تصاویر سے ظاہر ہوتا ہے کہ "حماس کے دہشت گرد ہسپتال کے اندر سے فوجیوں پر گولیاں چلا رہے ہیں"۔

اسی ذریعے کے مطابق 7 اکتوبر کو حماس کی جانب سے اسرائیل پر اچانک حملہ کرنے کے بعد غزہ کی پٹی میں "حماس کو ختم کرنے" کے لیے اسرائیلی افواج کی جانب سے کیے گئے زمینی آپریشن کے دوران یہ ویڈیو فلمائی گئی تھی۔

ہاگری نے کہا کہ ایک سرنگ "ہسپتال میں دہشت گردی کے بنیادی ڈھانچے کے لیے بھی استعمال کی گئی تھی" - اس ہسپتال کی تعمیر کے لیے قطر نے مالی امداد کی تھی۔

زیر زمین کمانڈ سینٹر

شمالی غزہ میں انڈونیشیا کے ہسپتال سے متعلق ایک دوسرے معاملے میں ہسپتال حماس سے تعلق رکھنے والے "دہشت گردی کے مبینہ ٹھکانوں کے اوپر بنایا گیا ہے۔ اس میں حماس کے لیے زیر زمین "کمانڈ سینٹر" چھپا ہوا ہے۔ ترجمان نے اس مبینہ کمانڈ سینٹر کی تصاویر بھی جاری کی ہیں۔

انہوں نے ایسے شواہد بھی پیش کیے جن سے ظاہر ہوتا ہے کہ فوج کے مطابق اس ہسپتال سے 75 میٹر کے فاصلے پر میزائل لانچنگ سائٹ موجود ہے۔

انہوں نے کہا کہ "وہ اچھی طرح جانتے ہیں کہ اگر اسرائیل نے اس لانچ بیس پر فضائی حملہ کیا تو ہسپتال کو نقصان پہنچے گا۔انہوں نے حماس کی طرف سے ہسپتالوں کو جنگی مقاصد کے لیے استعمال کرنے کی مذمت کی۔

ایمبولینس پر بمباری

غزہ کی پٹی میں ایک اسرائیلی بمباری ایک ایمبولینس کو نشانہ بنایا - رائٹرز
غزہ کی پٹی میں ایک اسرائیلی بمباری ایک ایمبولینس کو نشانہ بنایا - رائٹرز

اسرائیلی فوج نے جمعہ کے روز اعلان کیا کہ اس نے الشفاء ہسپتال کے سامنے ایک ایمبولینس کو بمباری سے نشانہ بنایا۔ اسرائیلی فوج نے دعویٰ کیا کہ ایمبولینس میں زخمی نہیں بلکہ حماس کے لیے اسلحہ لے جایا جا رہا تھا مگر ایمبولینس پر بمباری کے نتیجے میں 15 افراد ہلاک اور 60 زخمی ہوگئے تھے۔

ترجمان نے ایک آڈیو ریکارڈنگ بھی دکھائی جس سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ حماس ہسپتالوں سے ایندھن چوری کر رہی ہے۔

حماس کی تردید: اسرائیل پر ہسپتالوں کو نشانہ بنانے کے بہانے تراشنے کا الزام

دوسری جانب حماس کی حکومت نے ان الزامات کی سختی سے تردید کرتے ہوئے اسرائیل پر الزام لگایا کہ وہ انہیں ہسپتالوں کو نشانہ بنانے کے بہانے استعمال کر رہا ہے۔

حماس نے اتوار کی شام کہا کہ ہم ہسپتالوں کو فوجی مقاصد کے لیے استعمال نہیں کررہے ہیں۔ ہم ہسپتالوں کے معائنے کے لیے بین الاقوامی کمیشن بنانے اور ہسپتالوں کے معائنے کے لیے تیار ہیں۔

اسرائیلی فوج کو باقاعدگی سے اقوام متحدہ اور عالمی ادارہ صحت کی جانب سے غزہ میں ہسپتالوں اور صحت کے مراکز کو نشانہ بنانےکا الزام ہے۔ اسرائیلی فوج اب تک غزہ میں کئی ہسپتالوں کو بمباری کا نشانہ بنا چکی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں