فلسطین اسرائیل تنازع

نیتن یاہو کو جنگ سے بچنے کے حامی' ریزرو' فوجیوں کے خلاف بیان کی وضاحت کرنا پڑ گئی

جنگ کے اندرونی ذمہ داروں کے بجائے صرف حماس کو نشانہ بنانے کا عندیہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو پہلے انتہائی دائیں بازو کی ایسی جماعتوں کو اتحادی بنا کر مشکل میں تھے ، یاہو سے بھی کہیں زیادہ خراب اور براہ راست دہشت گردی کی رہی ہے، لیکن یاہو سات اکتوبر کے بعد پیدا شدہ مشکل صورت حال سے نکلنے کے لیے بنائی گئی جنگی کابینہ میں شامل ہونے والے اپوزیشن لیڈر بینی گینٹز کی وجہ سے بھی آسانی میں نہیں آسکے ہیں۔

نیتن کو بینی گینٹز کی وجہ اسرائیل کی 'ریزرو' فوج کے بارے میں اپنے ایک حالیہ بیان کی وضاحت کرنا پڑ گئی ہے جس میں انہوں نے اسرائیلی ریزرو دستوں کے جنگ لڑنے سے بچنے کا چند مہینے پہلے موقف پیش کیا تھا اور نیتن یاہو نے ماہ اکتوبر میں اس پر تنقید کی تھی۔

اسرائیل کے ان ' ریزرو فوجیوں ' نے حال ہی میں یہ موقف اپنایا تھا کہ وہ اب اپنی فوجی ڈیوٹی کے حوالے سے رپورٹ نہیں کیا کریں گے۔ گویا جنگ میں شامل نہیں ہونا چاہیں گے۔

اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو نے سات اکتوبر کے حملے کی وجوہات کے حوالے سے ' اپنے 'ریزرو' فوجیوں ' کے اس موقف کو جائزہ لینے کا چند روز پہلے عندیہ دیا تھا کہ ان ریزرو فوجیوں کے جنگ سے بچنے اور فرار کا موقف حماس کے حملے کی حوصلہ افزائی کا موجب تو نہیں بنا ۔

تاہم جنگی کابینہ کے رکن بینی گینٹز نے وزیر اعظم کے اس بیان کو ناپسند کیا اور کہا کہ نیتن یاہو کو یہ بیان واپس لینا چاہیے۔

نیتن یاہو کا خیال یہ رہا ہے کہ ان کی حکومت کے خلاف کئی ماہ سے جاری احتجاج اور 'ریزرو ' فوجیوں کا یہ موقف حماس کے حملوں کے لیے حوصلہ افزائی کا موجب بنا ہے۔ اس لیے وہ ان اسباب کا جائزہ لے کر اسرائیل پر ٹوٹنے والی مصیبت کے اندرونی ذمہ داروں کا تعین کرنا چاہتے ہیں۔

لیکن بعد ازاں بینی گینٹز کے کہنے پر انہوں نے یہ موقف واپس لے لیا۔ اور نئے بیان میں کہا ' جنگ حماس نے ہی شروع کی ہے۔ کیونکہ حماس ہم سب کو قتل کرنا چاہتی ہے۔ حماس غلط تھی۔اس لیے اسے مکمل طور پر ختم کرنا ہو گا۔'

اسرائیلی وزیر اعظم کا یہ بھی کہنا تھا کہ ' ہم حماس کے خلاف مل کر ہی جنگ جیت سکتے ہیں۔ ' نیتن یاہو نے یہ دو نمبر بیان بینی گینٹش کے مطالبے کے بعد دیا ہے۔ بینی گینٹز نے کہا تھا یہ اپنی زمہ داری محسوس کرنے اور دوسروں پر کیچڑ اچھالنے کا وقت نہیں ہے۔ جنگ کا وقت ہے جو ہمارے ملک کے لیے دھچکا ہے۔'

ادھر ہفتے کے روز نیتن یاہو کے گھر کے باہر اسرائیلی مطاہرین نے ان کے خلاف سخت احتجاج کیا ، وزیر اعظم کو جیل بھجوانے کا مطالبہ کر رہے تھے۔ مظاہرین کے ہاتھوں میں کتبے تھے جن پر تحریر تھا ۔' اب جیل ' ۔ مظاہرین فوجیوں کے بارے میں نیتن یاہو کے بیان پر نالاں تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں