فلسطین اسرائیل تنازع

اسرائیلی بمباری سے غزہ میں ڈاکٹرز ود آؤٹ بارڈرز کا رکن ہلاک ہو گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

بین الاقوامی طبی رضاکاروں کے گروپ، ڈاکٹرز ود آؤٹ بارڈرز نے گزشتہ دنوں بتایا کہ انکا ایک ملازم غزہ میں اسرائیلی فضائی حملے میں اپنے خاندان کے کئی افراد کے ساتھ مارا گیا ہے۔

تنظیم نے ایک بیان میں کہا کہ لیبارٹری ٹیکنیشن محمد الاہل ، شتی پناہ گزین کیمپ میں اپنے گھر میں اس وقت مارا گیا جب اسرائیلی بمباری کی وجہ سے عمارت منہدم ہو گئی۔

طبی رفاہی ادارے نے کہا ڈاکٹرز ود آؤٹ بارڈرز کی غزہ میں مصروف عمل ٹیم کے ایک رکن، محمد الاہل، جو چھ نومبر کو اپنے خاندان کے کئی افراد کے ساتھ اسرائیلی بربریت کا نشانہ بن گئے تھے، کی وفات پر سوگ کی حالت میں ہیں۔

واضح رہے کہ شمالی اور جنوبی غزہ میں کوئی بھی جگہ وحشیانہ اور اندھا دھند بمباری سے محفوظ نہیں ہے۔

رفاہی تنظیم کے مطابق فوری جنگ بندی کے لیے ہمارے بار بار کیئے جانے والے مطالبات کا کوئی مثبت جواب نہیں ملا۔ پھر بھی ہم اصرار کرتے ہیں کہ غزہ میں اموات کے وحشیانہ سلسلے کو کو روکنے اور پٹی میں انسانی امداد کی فراہمی کا یہی واحد راستہ ہے۔

تنظیم کی فرانس میں ڈائریکٹر کلیئر میگون نے صحافیوں کو بتایا کہ غزہ کے لوگ تباہ حال ہیں اور امدادی کارکن عملی طور پر بے اختیار ہو کر رہ گئے ہیں۔

اقوام متحدہ کے انسانی امور کے دفتر (OCHA) نے حماس کے زیر انتظام وزارت صحت کے اعداد و شمار کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ جنگ کے آغاز سے اب تک 192 ہیلتھ ورکرز ہلاک ہو چکے ہیں۔ ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کا حوالہ دیتے ہوئے او سی ایچ اے نے کہا کہ 16 ہیلتھ ورکرز اپنی ڈیوٹی کی انجام دہی کے دوران ہلاک ہوئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں