حماس شمالی غزہ میں کنٹرول کھو چکی ہے: اسرائیلی فوج کا دعویٰ

شمالی غزہ کے ہزاروں باشندے جنوب کی طرف چلے گئے ہیں: ترجمان فوج ریئر ایڈمرل ڈینیئل ہگاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

اسرائیلی فوج نے دعوی کیا ہے کہ حماس شمالی غزہ میں کنٹرول کھو چکی ہے۔ اسرائیلی فوج کے ترجمان ترجمان ریئر ایڈمرل ڈینیئل ہگاری نے کہا کہ شمالی غزہ سے ہزاروں باشندے جنوب کی طرف چلے گئے ہیں۔

انہوں نے کہا ہم نے 50000 غزہ کے باشندوں کو شمالی غزہ کی پٹی سے جنوب کی طرف جاتے دیکھا۔ وہ آگے بڑھ رہے ہیں کیونکہ وہ سمجھتے ہیں کہ شمال میں حماس کا کنٹرول ختم ہو گیا ہے۔ ریئر ایڈمرل ڈینیئل ہگاری نے مزید کہا کہ جنگ بندی نہیں ہوگی لیکن اسرائیل مخصوص اوقات میں انسانی ہمدردی کی بنیاد پر توقف کی اجازت دیتا رہا ہے تاکہ رہائشیوں کو جنوب کی طرف نقل مکانی کاموقع مل سکے۔

وزیر اعظم نیتن یاہو نے منگل کو کہا تھا کہ غزہ کو کوئی ایندھن نہیں پہنچایا جائے گا اور حماس کے ساتھ اس وقت تک جنگ بندی نہیں کی جائے گی جب تک کہ فلسطینی عسکریت پسندوں کے ہاتھوں یرغمال بنائے گئے افراد کو آزاد نہیں کردیا جاتا ۔ اسرائیل اور حماس کی جنگ 7 اکتوبر کو اس وقت شروع ہوئی جب حماس کے جنگجو غزہ کی پٹی سے نکل کر جنوبی اسرائیل میں داخل ہوگئے تھے۔

اسرائیل کے مطابق حماس کے عسکریت پسندوں نے 1948 میں اسرائیل کے قیام کے بعد سے ملک پر ہونے والے بدترین حملے میں تقریباً 1,400 اسرائیلیوں کو ہلاک کیا اور 240 افراد کو یرغمال بنا لیا ہے۔ جواب میں اسرائیل نے غزہ پر بمباری شروع کردی اور غزہ کے مختلف علاقوں پر قبضہ کرنا شروع کردیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں