"آباد کاروں پر تنقید نہ کریں"! اسرائیلی وزیرسخت برہم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیل کے قومی سلامتی کے وزیر ایتمار بن گویر نے کہا ہے انہیں یہودی آباد کاروں پر تنقید پر سخت غصہ ہے۔

اسرائیلی وزیر کا یہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب اسرائیلی حکومت کی طرف سے آباد کاروں میں بڑے پیمانے پر اسلحہ تقسیم کیا جا رہا ہے۔

فلسطینیوں کے وجدان میں آباد کاروں کو فراہم کردہ اسلحہ پوری قوت کے ساتھ موجود ہے۔

’ایکس‘پلیٹ فارم پراپنے اکاؤنٹ کے ذریعے ایک پوسٹ میں انتہائی دائیں بازو کے وزیر نے جمعرات کو اپنے شہریوں کے خلاف لگائے گئے "الزامات" پر تنقید کی۔ انہوں نے کہا کہ "آبادی کاروں کے تشدد پر اندرونی اور بیرونی تنقید کو عوامی گفتگو سے مکمل طور پر غائب ہونا چاہیے"۔

تصویر اور تبصرہ

انہوں نے زور دے کر کہا کہ "ہر کوئی جانتا ہے کہ یوش میں کون پرتشدد کارروائیاں کر رہا ہے"۔ انہوں نے ساتھ ہی ایک ٹوٹی ہوئی کار کی کھڑکی کی تصویر شائع کی۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ سامریہ کی بستی نے گذشتہ رات ایک نئے حملے کا مشاہدہ کیا جس کے نتیجے میں دو اسرائیلی زخمی ہوئے۔

اس سے پہلے اسرائیلی وزیر اعظم نے فلسطینیوں پر تشدد کرنے والے آباد کاروں کے خلاف براہ راست الزامات کو بے بنیاد قرار دیا تھا۔

العربیہ اورالحدث کے نامہ نگار نے تصدیق کی ہے کہ اسرائیل کی جانب سے یہ رد عمل اس وقت سامنے آیا ہے جب مغربی کنارے میں فلسطینیوں پر آباد کاروں کے حملے جاری ہیں۔

بہت سے مغربی ممالک نے فلسطینیوں کو نشانہ بنانے کے بڑھتے تشدد اور خلاف ورزیوں کے دوران مغربی کنارے اور اسرائیل کے اندر دیگر علاقوں کی صورت حال کے بارے میں اپنی تشویش کا اظہار کیا ہے۔

اسرائیلی فورسز کی طرف سے مغربی کنارے کے قصبوں میں روزانہ چھاپوں کے ساتھ ساتھ گرفتاریوں میں بھی اضافہ ہو رہا ہے۔

7 اکتوبر کو غزہ میں اسرائیل اور فلسطینی دھڑوں کے درمیان جنگ شروع ہونے کے بعد سے مغربی کنارے میں زیر حراست فلسطینیوں کی تعداد سینکڑوں تک پہنچ گئی ہے.

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں