اسرائیل نے القدس ہسپتال کے انتہائی نگہداشت وارڈ کو نشانہ بنایا ہے: ہلال احمر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

جنگ کے 35 ویں دن غزہ کی پٹی میں القدس ہسپتال پر اسرائیلی سنائپرز کی فائرنگ کے بعد فلسطینی ہلال احمر نے جمعہ کی شام اعلان کیا کہ اسرائیلی فوج نے القدس ہسپتال کے انتہائی نگہداشت یونٹ پر بھی فائرنگ کی ہے۔

Advertisement

فلسطینی ہلال احمر ایمبولینس نے قبل ازیں جمعہ کو اعلان کیا تھا کہ القدس ہسپتال میں اسرائیلی سنائپرز کی فائرنگ کے نتیجے میں ایک شخص ہلاک اور 20 زخمی ہو گئے ہیں۔ ہلال احمر نے اپنے بیان میں کہا کہ اسرائیلی سنائپرز نے القدس ہسپتال کو نشانہ بنایا اور عمارت میں موجود افراد پر براہ راست فائرنگ کی گئی۔

جمعہ کے روز اسرائیلی فورسز نے غزہ کی پٹی کے سب سے بڑے میڈیکل کمپلیکس الشفا ہسپتال کے صحن کے ساتھ ساتھ اس کے آؤٹ پیشنٹ کلینک پر بھی بمباری کی۔ یہ کلینک ہسپتال کے سکوائر کے قریب ہے۔ دریں اثنا الشفاء ہسپتال کے ڈائریکٹر محمد ابو سلمیہ نے صورتحال کو انتہائی خراب قرار دیتے ہوئے کہا کہ سینکڑوں زخمی ہسپتال کی راہداریوں کے اندر جمع ہیں۔

انہوں نے یہ بھی کہا جو کچھ ہو رہا ہے وہ ہسپتال کو خالی کرنے اور اسے خدمات فراہم کرنے سے محروم کرنے کی وارننگ ہے۔ اس طرح غزہ گورنری اور اس کے شمال میں صحت کے پورنے نظام کی سروس معطل ہو جائے گی۔ اس خوفناک صورت حال میں زخمیوں اور بیماریوں کی اموات کی شرح بڑھ جائے گی۔

اسرائیل نے النصر کمپلیکس پر بھی بمباری کی دھمکی دی تھی۔ غزہ میں الرنتیسی ہسپتال کے ڈائریکٹر بکر قعود نے تصدیق کی کہ النصر میڈیکل کمپلیکس میں 4 ہسپتال شامل ہیں۔ اسرائیلی بمباری کی دھمکی کے بعد اس کو مریضوں اور طبی عملے سے خالی کرا دیا گیا ہے۔

خیال رہے جمعہ کی علی الصبح سے ہی اسرائیلی فورسز شمالی غزہ کی پٹی کے ان ہسپتالوں میں موجود شہریوں کے گرد گھیرا تنگ کرنے کی کوشش کر رہی ہیں تاکہ انہیں جنوب کی طرف دھکیل کر اپنی زمینی دراندازی مکمل کی جا سکے۔

اسرائیل نے بارہا دھمکی دی ہے کہ وہ ان ہسپتالوں کے آس پاس بمباری کرے گا جہاں حالیہ عرصے کے دوران بمباری سے بھاگنے والے ہزاروں بے گھر افراد نے پناہ لے رکھی ہے۔

واضح رہے محصور غزہ کی پٹی کے 24 لاکھ باشندوں میں لگ بھگ 16 لاکھ افراد حالیہ عرصے کے دوران اسرائیل کے پرتشدد حملوں اور بمباری سے فرار ہو کر مصر کے قریب جنوبی علاقوں میں نقل مکانی کر گئے ہیں۔

سات اکتوبر کو شروع اس جنگ میں 1400 سے زیادہ اسرائیلی ہلاک ہو چکے ہیں۔ اسرائیلی حکام کے مطابق حماس نے 240 اسرائیلیوں اور غیر ملکیوں کو یرغمال بھی بنایا۔ 27 اکتوبر کو اسرائیل نے غزہ میں زمینی کارروائی بھی شروع کر رکھی ہے۔

جنگ کے 35 ویں روز بھی صہیونی جارحیت جاری رہی۔ فلسطینی وزارت صحت کے مطابق اب تک 11078 فلسطینی شہید ہو چکے ہیں۔ شہدا میں 4506 بچے اور 3027 خواتین شامل ہیں۔ مغربی کنارے میں جنگ کے آغاز سے اب تک 35 دنوں میں 180 فلسطینیوں کو شہید کیا جا چکا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں