’غزہ کی ننھی بے گھربچی جس کی ماں کو اسے دودھ پلانے کی فرصت بھی نہ ملی‘

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

غزہ کی پٹی میں اسرائیل کی مسلط کی گئی جارحیت سنگین المیوں اور سانحات کو جنم دے رہی ہےاور ہر گذرتے لمحے غزہ کے عوام ایک نئے قتل عام اور تباہی کو دیکھ رہے ہیں۔

تباہی اور بربادی کی اس جنگ میں کئی حاملہ خواتین بچوں کو جنم دیتے ہوئے اپنی جان سے گذر رہی ہیں۔

غزہ شہر کے الشفاء ہسپتال کو جمعہ کے روز اسرائیلی بمباری کا نشانہ بنایا گیا، جس کے نتیجے میں وہاں پرموجود لوگ جنوبی غزہ کی طرف نقل مکانی پر مجبور ہوگئے۔

اس تناظر میں جمعے کے روز خبر رساں ایجنسی ’رائیٹرز ‘ کی طرف سے شائع ہونے والی ایک رپورٹ سوشل میڈیا پر عوامی توجہ کا مرکز ہے۔ ویڈیو میں ایک فلسطینی خاتون کو اپنی نوزائدہ پوتی جس کی عمر صرف چھ گھنٹے ہے کو اٹھائے اور بھاگتے دیکھا جا سکتا ہے۔

خاتون کا کہنا ہے کہ "بچی ساڑھے چھ بجے پیدا ہوئی اور ہم نو بجے نکل پڑے، اسے اور اس کی ماں کو سکون کا ایک لمحہ بھی مہیں ملا،خدا کی قسم اسے دودھ نہیں پلایا گیا تھا"۔

غزہ کا سب سے بڑا ہسپتال

قابل ذکر ہے کہ الشفاء ہسپتال جسے جمعہ کے روز اسرائیلی میزائل حملے کا نشانہ بنایا گیا تھا غزہ کی پٹی کا سب سے بڑا ہسپتال ہے۔

حالیہ ہفتوں میں اسرائیل نے کہا ہے کہ حماس کے ارکان الشفاء ہسپتال اور دیگر ہسپتالوں کے نیچے کمانڈ سینٹرز اور سرنگوں میں رہ رہے ہیں۔

تاہم حماس کے محکمہ صحت کے حکام اور ہسپتال کے منتظمین نے اس بات کی تردید کی ہے ہسپتال کے اندر یا اس کے نیچے فوجی ڈھانچہ چھپا رکھا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں