سات اکتوبر سے پہلے والی حکمرانی واپس نہیں آئے گی: امریکہ، حکومت عوام کی ہوگی: حماس

واشنگٹن ہسپتالوں میں بندوق کی لڑائیاں نہیں دیکھنا چاہتا، ہم آج امریکیوں کو غزہ سے نکال دیں گے: جیک سلیوان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

وائٹ ہاؤس کے قومی سلامتی کے مشیر جیک سلیوان نے کہا ہے کہ واشنگٹن ہسپتالوں میں بندوق کی لڑائیاں نہیں دیکھنا چاہتا۔ امریکی سی بی ایس کے ساتھ ایک انٹرویو میں جیک سلیوان نے کہا کہ واشنگٹن اسرائیل اور قطر کے درمیان قیدیوں کے حوالے سے مذاکرات میں شامل ہے۔ انہوں نے غزہ میں حکمرانی کی بات کرتے ہوئے کہا کہ 7 اکتوبر سے پہلے کی بات چیت میں واپس آنا ممکن نہیں ہے۔ سلیوان نے کہا کہ انہیں یہ فیصلہ فلسطینی عوام پر چھوڑ دینا چاہیے کہ ان کی مستقبل کی حکمرانی کیسی ہوگی۔ وائٹ ہاؤس کے قومی سلامتی کے مشیر نے مزید کہا "ہم آج امریکیوں کو غزہ سے نکال دیں گے۔"

جیک سلیوان کے بیان کے جواب میں حماس رہنما اسامہ حمدان نے اتوار کو کہا کہ غزہ پر صرف اس کے عوام کی حکومت ہوگی، وہاں فلسطینیوں کے علاوہ کوئی سیاسی یا سکیورٹی اتھارٹی نہیں ہوگی۔

اسامہ حمدان نے بیروت میں منعقدہ ایک پریس کانفرنس میں مزید کہا کہ عرب اسلامی سربراہی اجلاس کا محاصرہ توڑنے اور محصور سیکٹر میں امداد کے داخلے کو مسلط کرنے کا فیصلہ صحیح سمت میں ہے اور ہم اس کے نفاذ کے منتظر ہیں۔

عرب اسلامی سربراہی اجلاس نے غزہ پر مسلط کردہ محاصرہ توڑنے اور ایندھن سمیت انسانی امداد کی فوری طور پر پٹی میں داخلے کو "مسلط" کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔

اسامہ نے شمال سے جنوبی غزہ یا پٹی سے باہر فلسطینیوں کو بے گھر کرنے کی کسی بھی کوشش کی مذمت کی۔ انہوں نے نے سلامتی کونسل سے مطالبہ کیا کہ وہ غزہ پر اسرائیلی حملے کو روکنے کا پابند فیصلہ کرے۔

غزہ میں اسرائیل اور مسلح فلسطینی دھڑوں کے درمیان جنگ کو 37 دن ہوگئے ہیں۔ اسرائیلی جارحیت میں شہید ہونے والے فلسطینیوں کی تعداد 11180 ہوگئی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں