سعودی عرب کی ہونہار معلمہ جس نے تدریس کا عالمی ایوارڈ جیت کرملک کا نام روشن کیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے علاقے نجران میں محکمہ تعلیم سے تعلق رکھنے والی سعودی ٹیچر نورا ہادی آل سرور نے 130 ممالک کے 7,000 مرد و خواتین اساتذہ امیدواروں میں سے سال 2023ء کے لیے دنیا کے 50 بہترین استاد کے طور پر "وارکی" انٹرنیشنل ایوارڈ جیت کر مملکت کا نام روشن کیا۔

ایوارڈ جاری کرنے کی تقریب گذشتہ ہفتے ’یونیسکو ‘ کے زیراہتمام منعقد کی گئی۔

دُنیا کا بہترین ٹیچر ایوارڈ ایک بین الاقوامی تعلیمی ایوارڈ ہے جو ورکی جیمز فاؤنڈیشن (VGF) کی طرف سے اقوام متحدہ کے ادارہ برائے سائنس وثقافت ’یونیسکو‘ کے تعاون سے دیا جاتا ہے۔ یہ ایوارڈ تعلیم کے پیشے سے منسلک اساتذہ کو دیا جاتا جو ان کی تدریسی خدمات کا اعتراف ہوتا ہے۔

استانی نورا آل سرور نے اس غیرمعمولی کامیابی پربجا طور پر اپنے فخر کا اظہار کیا۔ انہوں نے خدا کا شکر ادا کرتے ہوئے مملکت کی دانشمند قیادت کے تعاون اور دلچسپی ، مردو خواتین اساتذہ، اور طلباء کے تعاون پر ان کا شکریہ ادا کیا۔

قابل ذکر ہے کہ اپنے پیشہ ورانہ سفر کے دوران انہوں نے بہت سے ایسے کارنامے اور اعزازات حاصل کیے جو عالمی سطح پر قوم کے نام کیے گئے۔

ان میں سب سے حالیہ مشرق وسطیٰ میں تعلیمی تکنیکی ڈیزائن کے لیے بہترین آرٹ ورک کی پہلی پوزیشن کا ایوارڈ تھا، روس اور جاپان میں جدت کےکے دو گولڈ ایوارڈز اور گلوبل ایجوکیشنل کمیونیکیشن ایوارڈ، جہاں انہوں نے سیئٹل امریکا میں عالمی سطح پر دوسرا مقام حاصل کیا

اور گلوبل ایجوکیشنل کمیونیکیشن ایوارڈ، جہاں اس نے سیئٹل، امریکہ میں عالمی سطح پر دوسرا مقام حاصل کیا۔

انہوں نے الشیخ حمدان بن راشد آ مکتوم ایوارڈ، اسلامک ورلڈ کونسل کا ہیومینٹیرین ایجوکیشنل ایکسیلنس ایوارڈ (ICDR) اور دیگر ایوارڈز شامل ہیں۔ انہوں نے کئی مقامی، علاقائی اور بین الاقوامی فورمز، کانفرنسوں اور نمائشوں میں ورکنگ پیپرز اور تحقیقی کاموں میں حصہ لے کر ملک و قوم کا نام روشن کیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں