اسرائیل نے حماس کی ویڈیو میں نظر آنے والی خاتون اسیر فوجی کی موت کی تصدیق کر دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی فوج نے منگل کے روز فلسطینی عسکریت پسند گروپ حماس کے ہاتھوں غزہ میں قید ایک خاتون سپاہی نوا مارسیانو کی ہلاکت کی تصدیق کر دی۔

اسرائیلی دفاعی افواج کے ایک بیان میں مارسیانو کو "دہشت گرد تنظیم کی اغوا شدہ مردہ دفاعی فوجی" کہا گیا جس کے ایک دن بعد فوج نے ان کی شناخت کی تصدیق کی تھی۔ یہ تصدیق حماس کی جاری کردہ ایک ویڈیو کے بعد ہوئی جس میں نوجوان خاتون کو قید میں دکھایا گیا تھا۔

پیر کے روز حماس کے عسکری ونگ نے مارسیانو کی ایک ویڈیو جاری کی جس میں انہوں نے اپنی شناخت کی اور اسرائیل سے بمباری مہم بند کرنے کا مطالبہ کیا جس میں ان کی بظاہر مرنے والی تصویر کے ساتھ موازنہ کیا گیا تھا۔

حماس کے عسکری ونگ کے ترجمان ابو عبیدہ نے کہا کہ مارسیانو اسرائیلی حملے میں ہلاک ہو گئیں۔ اسرائیلی فوج نے یہ نہیں بتایا کہ وہ کیسے ہلاک ہوئیں۔

مارسیانو کی موت کے ساتھ غزہ جنگ کے آغاز سے اب تک ہلاک شدہ اسرائیلی فوجیوں کی تعداد 47 ہو گئی ہے۔

حماس کے جنگجوؤں کی جانب سے 7 اکتوبر کو جنوبی اسرائیلی کمیونٹیز پر ملک کی تاریخ کا مہلک ترین حملہ کیا گیا جس کے بعد سے اسرائیل غزہ کی پٹی پر مسلسل بمباری کر رہا ہے۔

اسرائیلی حکام کے مطابق حماس کے حملوں میں تقریباً 1,200 افراد ہلاک ہوئے جن میں زیادہ تر عام شہری تھے۔

حماس کے زیرِ انتظام علاقے میں وزارتِ صحت کے مطابق اسرائیل کے جوابی حملوں میں غزہ میں 11,200 سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں جن میں زیادہ تر عام شہری اور ہزاروں بچے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں