فلسطین اسرائیل تنازع

179 افراد احاطے میں ’اجتماعی قبر‘ میں دفن ہیں: ڈائریکٹر الشفاء ہسپتال غزہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

غزہ کے سب سے بڑے الشفاء ہسپتال کے ڈائریکٹر نے منگل کو بتایا کہ 179 افراد کو کمپلیکس میں ایک "اجتماعی قبر" میں دفن کر دیا گیا تھا جن میں بچے اور انتہائی نگہداشت یونٹ میں مر جانے والے مریض شامل تھے۔

الشفاء ہسپتال کے ڈائریکٹر محمد ابو سلمیہ نے کہا کہ "ہمیں انہیں اجتماعی قبر میں دفن کرنے پر مجبور تھے۔" اور مزید کہا کہ دفن کیے جانے والوں میں سات بچے اور 29 انتہائی نگہداشت والے مریض وہ تھے جنہیں ہسپتال میں ایندھن کی فراہمی ختم ہو جانے کے بعد دفن کیا گیا۔"

انہوں نے کہا، "ہسپتال کے احاطے میں لاشیں بکھری پڑی ہیں اور مردہ خانے میں اب بجلی نہیں ہے،" کیونکہ 7 اکتوبر کو اسرائیل اور حماس کی جنگ شروع ہونے کے بعد سے غزہ کی پٹی میں کوئی ایندھن داخل نہیں ہوا ہے۔

سلمیہ نے بتایا کہ منگل کے روز ایک مرد اور ایک عورت آئی سی یو میں فوت ہو گئے جس سے یونٹ میں مرنے والوں کی تعداد 29 ہو گئی۔

ہسپتال کے اندر موجود اے ایف پی کے ساتھ اشتراک کرنے والے ایک صحافی نے بتایا کہ اس سہولت میں ہر جگہ گلنے سڑنے والی لاشوں کی بدبو پھیلی ہوئی تھی۔

لیکن انہوں نے کہا کہ پیر سے منگل تک رات کے وقت لڑائی اور فضائی حملے گذشتہ راتوں کے مقابلے میں کم شدید تھے۔

اسرائیلی ٹینک الشفاء ہسپتال کے دروازوں پر جمع ہو گئے ہیں جس کے بارے میں اسرائیل نے کہا ہے کہ حماس کے زیرِ استعمال ایک زمین دوز کمانڈ "نوڈ" وہاں چھپا ہوا ہے۔ یہ ایک ایسا الزام ہے جس کی فلسطینی عسکریت پسند گروپ تردید کرتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں