بیت لحم کے قریب فائرنگ میں زخمی ایک اسرائیلی فوجی ہلاک، القسام نے ذمہ داری قبول کرلی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مغربی کنارے میں ایک چوکی پر تین افراد نے فائرنگ کرکے ایک اسرائیلی فوجی کو ہلاک اور 5 کوزخمی کردیا۔ القسام بریگیڈ نے حملہ کی ذمہ داری قبول کرلی۔ بعد ازاں اسرائیلی فوج نے ایک بیان میں تصدیق کی کہ مذکورہ حملے کے بعد ایک فوجی زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے چل بسا۔

مغربی کنارے اور مشرقی القدس کے درمیان ایک فوجی چوکی کے قریب فائرنگ کے تبادلے کے دوران 20 سالہ ابراہام فطینہ شدید زخمی ہو گیا۔ اسرائیلی پولیس کے مطابق تینوں حملہ آوروں کو فائرنگ کرکے مار دیا گیا۔

اس سے قبل اسرائیلی پولیس نے کہا تھا کہ 3 مشتبہ فلسطینی حملہ آوروں نے بدھ کو مغربی کنارے میں القدس اور بیت لحم شہر کے درمیان ایک سڑک پر واقع چوکی پر فائرنگ کردی تھی۔ فائرنگ کی زد میں آکر 6 اہلکار زخمی ہوگئے ہیں۔ بعد ازاں ایک زخمی ہلاک ہوگیا۔

اسرائیلی داخلی سلامتی سروس (شاباک) نے بتایا کہ کم از کم دو بندوق برداروں کا تعلق حماس سے تھا۔ پولیس کمشنر یاکوف شبتائی نے کہا کہ بندوق بردار ایک بہت بڑے حملے کی منصوبہ بندی کر رہے تھے۔

شبتائی نے جائے وقوعہ پر صحافیوں کو دیے گئے بیانات میں مزید کہا کہ حملہ آور بیت المقدس کی سمت سے آنے والی ایک کار میں پہنچے ۔ وہاں موجود اسرائیلی فورسز نے ان سے پوچھ گچھ شروع کی تو انہوں نے فائرنگ کردی۔ فورسز کی جوابی فائرنگ میں تینوں مارے گئے۔ ان کے قبضہ سے دو خودکار ہتھیار، دو پستول اور گولیاں برآمد ہوئیں

اس واقعہ سے متعلق سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو گردش کرنے لگی۔ اس ویڈیو کو بس میں بیٹھی کسی سوار نے فلمایا۔ ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ فوجی وردی پہنچا ہوا ایک شخص بھاگ رہا اور گر رہا ہے۔ اس دوران چیک پوسٹ پر گولیاں چل رہی تھیں۔

مرکزاطلاعات فلسطین نے جمعرات کو بتایا کہ القسام بریگیڈز کی اسرائیلی فوج کے ساتھ شمالی مغربی کنارے کے گاؤں جنین میں جھڑپ ہوئی ہے۔ القسام نے ٹیلی گرام کے ذریعے بتایا کہ اس نے ان فورسز کو نشانہ بنایا ہے جنہوں نے کفر دان گاؤں پر گولیوں اور دھماکہ خیز آلات سے حملہ کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں