پندرہ زخمی فلسطینی بچے علاج کے لیے امارات منتقل

زخمی بچوں کے ساتھ ان کے خاندان کے افراد بھی شامل ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

ایک درجن سے زائد زخمی فلسطینی بچوں کو علاج کے لیے متحدہ عرب امارات منتقل کر دیا گیا ہے۔ ان زخمی بچوں کے ساتھ ان کے خاندان کے افراد کو بھی ایک 'چارٹرڈ ' طیارے کے ذریعے غزہ سے عرب امارات لے جایا گیا ہے۔

عرب امارات کے صدر شیخ محمد کی طرف سے اعلان کیا گیا تھا کہ امارات کے ہسپتالوں میں 1000 زخمی عورتوں اور بچوں کو علاج کی سہولت دی جائے گی۔ غزہ میں اسرائیل کی مسلسل بمباری سے 30000 سے زائد فلسطینی زخمی ہو ئے ہیں۔

زخمی بچوں اور ان کے خاندان کے دیگر افراد کا ابو ظہبی میں اماراتی طبی عملے کے ارکان نے خیر مقدم کیا۔ واضح رہے اسرائیل نے غزہ میں ہسپتالوں کو بھی مسلسل بمباری کر کے تباہ کر دیا اور جو بچ گئے ان کی ناکہ بندی کر کے انہیں کام کا نہیں رہنے دیا گیا۔

ان زخمی بچوں کی امارات کے لیے روانگی کا اہتمام مصر کے العریش ائیر پورٹ سے کیا گیا تھا ۔ جو اس وقت غزہ سے باہر امدادی کارروائیوں کے لیے مختص کیا گیا ہے۔ عالمی اداروں کے نمائندے بھی غزہ میں اسی راستے سے پہنچتے ہیں۔

15 فلسطینی بچوں میں انتہائی زخمی بچے یا زیادہ بمباری سے جل چکے بچے ہیں، بتایا گیا ہے کہ چند بچے کینسر کے مرض میں مبتلا بھی ہیں ۔ جن کےاب مکمل علاج کے اخراجات اماراتی حکومت برداشت کرے گی۔

امارات کی نائب وزیر خارجہ برائے صحت ماہا برکات کے مطابق طبی عملے نے غزہ سے آنے والے زخمیوں کو علاج کی بہترین سہولتیں فرام کرنے کے لیے تمام تر تیاریاں کی ہیں۔ جیسا کہ غزہ میں مسئلہ شروع ہونے کے ساتھ ہی عرب امارات نے اس کے لیے ضروری امدادی کارروائیوں کے لیے فعا ل کردار ادا کرنا شروع کر دیا تھا۔

نائب وزیر نے کہا ' امارت کے صدر شیخ محمد بن زاید ال نہیان نے فوری طور پر انسانی بنیادوں پر امداد کے طور پر 20 ملین ڈالر کی رقم مختص کر دی تھی۔ اسی طرح صدر امارات نے فوری طور پر غزہ میں فیلڈ ہسپتال قائم کرنے کی ہدایات دی۔

انہوں نے بتایا غزہ کے متاثرہ افراد کے لیے اب تک امارات کے 51 طیارے 1400 ٹن وزنی امدادی سامان لے مصر روانہ ہو چکے ہیں۔ اس سامان میں خوارک ، ادویات سمیت تمام ضروری اشیا شامل کی گئی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں