ہم نے بحری جہاز کے عملے کے ساتھ تمام رابطے منقطع کر دیے ہیں: مالک ’’ گلیکسی لیڈر‘‘

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

حوثیوں کے قبضے میں آنے والے بحری جہازا"گلیکسی لیڈر" کے مالک نے انکشاف کیا ہے کہ فوجی عہدیدار غیر قانونی طور پر ہیلی کاپٹر کے ذریعے جہاز کے عرشے پر سوار ہوئے۔ انہوں نے وضاحت کی کہ ان کا جہاز کے عملے سے تمام رابطہ منقطع ہو گیا ہے۔ یہ طیارہ اس وقت حدیدہ کی بندرگاہ پر کھڑا کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ جہاز کو حراست میں لینا جہاز رانی کی آزادی کی کھلی خلاف ورزی ہے۔

اس سے قبل حوثی گروپ نے ایک ویڈیو کلپ شائع کیا تھا جس میں بحیرہ احمر میں ایک بحری جہاز کو کنٹرول کرنے کے لیے ہیلی کاپٹر کا استعمال دکھایا گیا تھا۔

حوثی گروپ نے کہا کہ اس نے بحیرہ احمر میں ساحل کی طرف سفر کرتے ہوئے ایک اسرائیلی جہاز کو اپنے قبضہ میں لے لیا ہے۔ حوثیوں نے اعلان کیا تھا کہ بحیرہ احمر میں آنے والے تمام اسرائیلی بحری جہازوں کو ہدف بنایا جائے گا۔

حوثی فوج کے ترجمان یحییٰ ساری نے تصدیق کی ہے کہ حوثیوں کی کارروائیوں میں صرف اسرائیلی جھنڈے والے اور اسرائیل کی ملکیت والے بحری جہازوں کو نشانہ بنایا گیا ہے ۔

اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو کے دفتر نے کہا تھا کہ بحری جہاز پر حملہ حوثیوں نے ایرانی ہدایات کے تحت کیا ہے۔ یہ ایک اسرائیلی کمپنی نے چارٹر کیا تھا اور اس بحری جہاز پر کوئی اسرائیلی نہیں تھا۔

واضح رہے اکتوبر کی سات تاریخ کو تنازع شروع ہونے کے بعد سے خطے میں جنگ کے پھیلاؤ کو علاقائی تنازع میں بدلنے کے خدشات بڑھ گئے ہیں۔ ایران نے ایک سے زیادہ مرتبہ واضح کیا ہے کہ اس کا جنگ کو وسعت دینے کا ارادہ نہیں ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں