امید ہے کہ غزہ جنگ بندی سےاسرائیل اورلبنان کی سرحدی جھڑپوں میں 'تؤقف' آجائے گا:امریکہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

منگل کو دیر گئے ایک سینئر امریکی اہلکار نے کہا، صدر جو بائیڈن کی انتظامیہ کو امید ہے کہ غزہ میں جنگ بندی اسرائیل اور لبنان کی سرحد کے ساتھ لڑائی میں "مکمل تؤقف" کا باعث بنے گی۔

امریکی اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر کہا، "ہمیں یہ بھی امید ہے کہ یہ (اسرائیل اور حماس کے درمیان متفقہ چار روزہ جنگ بندی) شمال میں لبنان کی سرحد پر ہونے والی کچھ دشمنیوں میں مکمل تؤقف کا باعث بنے گی۔"

قبل ازیں یہ اعلان کیا گیا تھا کہ اسرائیل اور حماس نے چار روزہ جنگ بندی پر اتفاق کیا جس کے تحت فلسطینی گروپ 7 اکتوبر کو یرغمال بنائے گئے درجنوں افراد کو رہا کرے گا جس کا دونوں فریقوں نے بدھ کو اعلان کیا۔

اسرائیلی وزیرِ اعظم بنجمن نیتن یاہو کی کابینہ نے تقریباً رات بھر کی میٹنگ کے بعد اس معاہدے کی منظوری دی جس میں انہوں نے متعصب وزراء سے کہا کہ یہ ایک "مشکل لیکن درست فیصلہ" تھا۔"

ایک حکومتی ترجمان نے اے ایف پی کو بتایا کہ معاہدے کے تحت کم از کم 50 اسرائیلی اور غیر ملکی یرغمالیوں -- خواتین اور بچوں -- کو رہا کیا جائے گا جس کے بدلے میں فوجی کارروائیوں میں چار دن کی "خاموشی" ہو گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں