دمشق: بدھ کے روز حزب اللہ کے ٹھکانوں پر اسرائیلی میزائل حملہ

پچھلے ماہ اسرائیلی حملوں کے بعد سے ابھی تک دو شامی ائیر پورٹ فعال نہ ہو سکے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیل کی بمباری کے بعد سے شام کے دو اہم ائیر پورٹ ابھی تک بند پڑے ہیں۔ اسرائیل کی یہ بمباری ایک ماہ پہلے ہوئی جس میں ائیر پورٹس کو ہدف بنایا گیا تھا۔ جب سے شام میں تصادم شروع ہوا ہے ائیر پورٹس کی سروس کی یہ بندش طویل تر ہے۔

برطانیہ سے کام کرنے والی شامی آبزرویٹری کے مطابق اسرائیل کی طرف سے بدھ کے روز بھی دارالحکومت کے نزدیک دو حملے کیے۔ ان حملوں میں دمشق کے اتحادی لبنانی ملیشیا حزب اللہ کے ٹھکانوں کو نشانہ بنایا گیا۔

البتہ دمشق اور حلب کے ائیر پورٹوں کو 22 اکتوبر کو بند کرنا پڑا تھا کہ اسرائیلی حملوں سے رن ویز کا کافی نقصان ہو چکے تھے۔

'آبزرویٹری کے سربراہ رامی عبدالرحمان نے کہا' شام کے دونوں ائیر پورٹس کی مرمت ہو چکی ہے لیکن اس کے باوجود ان کی فضائی سروس بحال نہیں کی گئی ہے۔

تاہم اس بارے میں شامی حکام نے میڈیا کی طرف سے رابطہ کرنے پر بھی کوئی جواب نہیں دیا ہے۔

اسرائیل جس نے 2011 سے اب تک شام کے اندر سینکڑوں فضائی حملے کیے ہیں اب سات اکتوبر سے بطور خاص شام میں حزب اللہ کے ٹھکانوں کا بمباری کا نشانہ بنا رہی ہے۔

بدھ کے روز بھی دمشق کے نزدیک ایسی ہی بمباری کی گئی تاہم اس سے کسی نقصان کی فوری اطلاع نہیں ملی ہے۔ حتیٰ کہ شام کے میڈیا نے ان حملوں کو بھی رپورٹ نہیں کیا ہے۔

البتہ فوجی حکام نے اس حملے کی تصدیق کی ہے۔ فوجی حکام کے مطابق سہ پہر تین بجکر دس منٹ پر گولان کی مقبوضہ پہاڑیوں کی طرف سے شامی دارلاحکومت کے نزدیک دو میزائل داغے گئے۔ ان میں سے ایک کو فضائی دفاعی نظام کے تحت روک دیا گیا اور راستے میں ہی تباہ کر دیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں