فلسطین اسرائیل تنازع

'امدادی سامان حماس تک پہنچنے کے کوئی شواہد نہیں ملے'

یورپی کمیشن کی رپورٹ میں اظہار اطمینان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یورپی کمیشن نے منگل کے روز غزہ میں جاری امدادی کارروائیوں سے متعلق اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ ایسا کوئی ثبوت سامنے نہیں آیا ہے کہ امدادی سامان حماس کے لوگوں کو مل رہا ہو۔ یورپی یونین کی صدر ارسلا وان ڈیر لیین کی طرف سے اظہار اطمینان کیا گیا۔

یہ بات یورپی کمیشن کی ایگزیکٹو وائس پریزیڈنٹ ویلڈیس ڈومبروسکس نے منگل کے روز برسلز میں بتائی ہے۔

واضح رہے پچھلے دنوں فرانس کی میزبانی میں اسرائیل کے حامی اور دنیا کے طاقتور ملکوں کی ایک کانفرنس کا انعقاد ہوا تو اس میں یہ نکتہ بھی اہمیت کا حامل تھا کہ امدادی سامان حماس کو کسی صورت نہیں ملنا چاہیے۔ اس کانفرنس میں بھی امدادی سامان کی تقسیم کی مانیٹرنگ پر بھی زور دیا گیا تھا۔

اسرائیل بھی اس خدشے کا شکار رہتا ہے کہ امدادی سامان حماس کی دسترس میں نہ چلا جائے۔ ان تمام تشویشی حلقوں کی تشویش یورپی کمیشن کی اس جائزہ رپورٹ سے دور ہونے کا امکان پیدا ہوا ہے۔

یورپی کمیش کی رپورٹ کے مطابق ایسی کوئی چیز ثابت نہیں ہوئی کہ براہ راست یا بالواسطہ کسی بھی طور امدادی سامان حماس کو مل رہا ہے۔ نیز یہ امدادی سامان جن افراد کو ملنا چاہیے انہیں بلا تاخیر فراہم کر دیا جاتا ہے۔

دوسری جانب یورپی کمیشن کی سربراہ ارسلا وان ڈیر لیین نے رپورٹ پیش کیے جانے پر اطمینان ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے 'سات اکتوبر کے بعد یہ ضروری ہو گیا تھا کہ غزہ میں انسانی بنیادوں پرتقسیم ہونے والی امداد کا جائزہ لیا جائے کہ امدادی سامان حماس کو تو نہیں مل رہا ہے۔

یورپی کمیشن کی صدر نے اس پر بھی خوشی ظاہرکی ہے کہ امدادی سامان کے حوالے سے ہمارے سارے حفاظتی پروٹوکولز بھی پورے ہو رہے ہیں اور مستقبل کے ڈیزائن کے مطابق امدادی ایجنڈا آگے بڑ ھ رہا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں