جنوبی غزہ میں سڑکوں پر بھیڑ اور شہریوں کی نقل و حرکت،شمالی غزہ میں کرفیو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

غزہ کی پٹی میں آج جمعے کے روز ڈیڑھ ماہ کی جنگ کے بعد چار روز کے لیے سیز فائر کے بعد جنوبی غزہ میں شہریوں کی نقل وحرکت دیکھی جا رہی ہے مگر شمالی غزہ میں کرفیو لگا دیا گیا ہے۔

جنوبی غزہ کی سڑکیں شہریوں کے ھجوم سے بھری ہوئی ہیں جبکہ شمالی غزہ میں فائرنگ کی آوازیں بھی سنائی دی گئی ہیں۔

جنوب میں واقع رفح شہر میں سڑکوں پر غیرمعمولی نقل حرکت دیکھی جا رہی ہے کیونکہ رہائشی بم دھماکے یا بمباری کے خوف کے بغیر بازاروں میں اپنی ضرورت کی خریداری کے لیے نکلے۔

جہاں تک شمالی غزہ کا تعلق ہے۔ اسرائیلی فوج نے اسے "جنگی زون" قرار دیتے ہوئے وہاں پر کرفیو لگا دیا ہے۔

انہوں نے زور دے کر کہا کہ غزہ کی پٹی میں جنگ ابھی ختم نہیں ہوئی ہے اور انسانی مقاصد کے لیے سیز فائر عارضی ہے۔

جب ہزاروں بے گھر افراد نے شمال میں اپنے گھروں کو واپس جانے کی کوشش کی تو اسرائیلی اسنائپرز نے ان پر فائرنگ کر دی جس کے نتیجے میں متعدد شہری زخمی ہوگئے اور انہیں ہسپتالوں میں لے جایا گیا۔

دوسری طرف جنگ بندی میں ہر روز تقریباً 200 ٹرکوں کے داخلے کی اجازت دے کر ایندھن سمیت امداد کے معقول بہاؤ کی اجازت دی گئی ہے۔ اقوام متحدہ کے حکام کا کہنا ہے کہ انہیں توقع ہے روزانہ پانچ سو ٹرک انسانی امداد لے کر غزہ داخل ہوں گے۔

العربیہ اور الحدث کے نامہ نگار نے تصدیق کی کہ سینکڑوں ٹرک رفح کراسنگ کے ذریعے غزہ میں داخل ہوئے اور ایمبولینسز زخمیوں کو مصری ہسپتالوں میں منتقل کرنے کے لیے روانہ ہوئیں۔

اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو کے ترجمان نے بھی تصدیق کی کہ فوج نے مقامی وقت کے مطابق سات بجے معاہدے پر عمل درآمد شروع کرنے کے ساتھ ہی عارضی جنگ بندی لائنوں پر اپنی تعیناتی مکمل کر لی ہے۔

جنگ بندی کا آغاز جمعہ کی صبح ہوا، جس کے بعد سہ پہر کو حماس کے زیر حراست شہری قیدیوں کی پہلی کھیپ کو رہا کیا گیا۔ قطر نے جمعرات کو اعلان کیا جب کہ حماس نے فلسطینی قیدیوں کے اسرائیلی قیدیوں کے تبادلے کی تصدیق کی۔

رہا ہونے والوں کی تعداد 13 خواتین اور بچوں پر مشتمل ہوگی۔ مجموعی طور پر چار دن میں 50 یرغمالیوں کو رہا کیا جائے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں