14 اسرائیلی یرغمالیوں کے بدلے 42 فلسطینی قیدیوں کی رہائی متوقع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

غزہ کی پٹی میں اسرائیل اور فلسطینی دھڑوں کے درمیان جنگ بندی کے دوسرے روز اسرائیلی حکام کی جانب سے جیلوں میں قید 42 فلسطینیوں کی رہائی کا امکان ہے۔

دوسری جانب اسرائیلی حکام نے اطلاع دی ہے کہ حماس نے سات اکتوبر کو یرغمال بنائے گئے 14 اسرائیلیوں کو رہا کردیا ہے۔

دوسرا مرحلہ

اسرائیلی محکمہ جیل خانہ جات نے ایک بیان میں اعلان کیا کہ وہ یرغمالیوں کے معاہدے کے دوسرے مرحلے میں 42 فلسطینی قیدیوں کو رہا کرنے کی تیاری کر رہا ہے۔

العربیہ اور الحدث ٹی وی چینلوں کے نامہ نگار کے مطابق توقع ہے کہ گذشتہ روز کی طرح اسرائیلی زیر حراست افراد کو رہائی کے بعد ریڈ کراس کے حوالے کر دیا جائے گا۔

کل جمعہ کو دیر سے اسرائیل کو ان قیدیوں کے ناموں کی فہرست موصول ہوئی جنہیں آج حماس رہا کیا جا رہا ہے۔ اسرائیلی نشریاتی ادارے کی طرف نشر کردہ رپورٹ کے مطابق موساد اور فوج کو وہ فہرست موصول ہوئی تھی

پہلا مرحلہ

کل جمعہ کے روز غزہ میں عارضی جنگ بندی کے پہلے روز حماس نے یرغمال بنائے گئے13 اسرائیلیوں کو رہا کیا تھا جب کہ اسرئیل نے معاہدے کے مطابق جیلوں میں قید خواتین اور بچوں سمیت 39 قیدیوں کو رہا کردیا تھا۔

تیرہ اسرائیلیوں کے علاوہ حماس نے تھائی لینڈ کے 10 باشندوں اور ایک فلپائنی کو بھی رہا کیا تھا۔ انہیں حماس نے سات اکتوبر کو غزہ کے قریب واقع بستیوں پر اچانک حملے میں یرغمال بنا لیا تھا۔

دوسرے مرحلے میں آج شام تک مزید فلسطینی قیدیوں کی اسرائیلی جیلوں سے رہائی متوقع ہے جب کہ حماس نے اسرائیلی یرغمالیوں کے ایک گروپ کو رہا کرنے کے انتظامات مکمل کرلیے ہیں۔

اس طرح مجموعی طور پر 50 اسرائیلی یرغمالیوں کے بدلے میں اسرائیل ڈیڑھ سو فلسطینی قیدیوں کو جن میں زیادہ تر بچے اور خواتین شامل ہیں کو رہا کرنے کا معاہدہ کیا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں