فلسطین اسرائیل تنازع

اسرائیلی فوج کا حماس پر جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی کا الزام

اسرائیلی فوج کا غزہ میں یرغمال لڑکی کو اس کی والدہ کے بغیر رہا کرنے کا دعویٰ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پیر کے روز امریکی سی این این نیٹ ورک نے اسرائیلی فوج کے ترجمان جوناتھن کونریکس کے حوالے سے فلسطینی تحریک حماس پر الزام لگایا کہ اس نے ایک کم عمر لڑکی کو رہا کیا مگر اس کی والدہ کو اس کے ساتھ رہا نہیں کیا۔ حماس کا یہ اقدام طے پائی جنگ بندی کے اصولوں کی خلاف ورزی ہے۔

کونریکس نے کہا کہ حماس نے دعویٰ کیا کہ وہ اس لڑکی کی ماں کا ٹھکانہ نہیں جانتی، جبکہ بیٹی نے فوج کو مطلع کیا کہ وہ اور اس کی ماں اپنی رہائی سے دو دن پہلے تک ساتھ تھے۔ حماس پر الزام لگایا کہ وہ اپنے قبضے میں موجود ہر اسرائیلی کو "سیاسی دباؤ" کے لیے استعمال کرنا چاہتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسرائیلی فوج کو "اشارے" ملے ہیں کہ حماس جنگ بندی کی مدت کے دوران قیدیوں کی جگہیں بدل رہی ہے۔

اسرائیل اور حماس نے جمعہ کو شروع ہونے والی چار روزہ جنگ بندی کے دوران اسرائیل کے زیر حراست 150 فلسطینی قیدیوں کے بدلے غزہ میں حماس کے زیر حراست 50 قیدیوں کے تبادلے پر اتفاق کیا تھا۔

وائٹ ہاؤس نے کہا کہ امریکی صدر جو بائیڈن اور اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے اتوار کو فون پر بات کی اور تمام قیدیوں کی رہائی کے لیے کوششیں جاری رکھنے پر اتفاق کیا۔"

وائٹ ہاؤس نے ایک بیان میں کہا کہ "دونوں رہ نماؤں نے اس بات پر اتفاق کیا کہ کام ابھی ختم نہیں ہوا ہے اور وہ تمام قیدیوں کی رہائی کو محفوظ بنانے کے لیے کام جاری رکھیں گے"۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں